ہانک کانگ: ملزمان کی حوالگی کے قانون کے خلاف لاکھوں افراد کا احتجاج

ہانک کانگ میں ملزمان کی حوالگی سے متعلق پیش کیے قانون کے خلآف لاکھوں افراد نے احتجاج کیا جس کے باوجود حکومت قانون منظور کرنے کے فیصلے پر قائم ہے۔

دی گارجین کی رپورٹ کے مطابق مجرمان کی حوالگی سے متعلق پیش کیے گئے قانون کے تحت نیم خود مختار ہانک کانگ اور چین سمیت خطے کے دیگر علاقوں میں کیس کی مناسبت سے مفرور مجرمان کو حوالے کرنےکے لیے معاہدے کیے جائیں گے۔

مذکورہ قانون کی مخالفت کرنے والے افراد کا کہنا ہے کہ یہ بِل چینی حکومت کی جانب سے پیش کیا گیا ہے اور انہیں خدشہ ہے کہ بیجنگ اس قانون کو سرگرم سماجی کارکنان، ناقدین اور دیگر سیاسی مخالفین کی حوالگی کے لیے استعمال کرے گا جو چین کی سیاست زدہ عدالتوں میں پہنچیں گے۔

ہانگ کانگ کی چیف ایگزیکٹو کیری لام کا کہنا ہے کہ ' یہ بِل چین کی حکومت کی جانب سے پیش نہیں کیا گیا، مجھے کوئی ہدایت موصول نہیں ہوئی'۔

ان کا کہنا تھا کہ اس بل کی مخالفت غلط فہمی کا نتیجہ ہے۔

دوسری جانب مذکورہ قانون کے حامیوں کا کہنا ہے کہ اس کی مدد سے ہانک کانگ کو مفرور مجرمان کی پناہ گاہ بنائے جانے سے بچایا جاسکے گا۔

ہانک کانگ کی انتظامیہ جولائی سے قبل اس قانون کو منظور کرنے کے لیے پرعزم ہے اور تائیوان میں محبوبہ کے قتل کے جرم میں مطلوب شخص سے متعلق کیس کے باعث جلد بازی کررہی ہے۔

کیری لام نے کہا کہ ' ہانک کانگ کو آگے بڑھنا ہے، کوئی بھی ہانک کانگ کو مفرور مجرموں کی جنت بنانا نہیں چاہتا۔

گزشتہ روز ہزاروں افراد نے بل کی مخالفت میں احتجاج کیا تھا، احتجاج کے منتظمین کا کہنا ہے کہ ایک اندازے کے مطابق 10 لاکھ افراد مظاہرے میں شریک تھے۔

خیال رہے کہ اس سے قبل1997 میں شہر میں سب سے بڑا مظاہرہ ہانک کانگ کو برطانوی راج سے چین کے حوالے کیے جانے کے فیصلے کے خلاف کیا گیا تھا۔

تاہم پولیس کا کہنا ہے کہ گزشتہ روز ہونے والے ا حتجاج میں 2 لاکھ 40 ہزار افراد شریک تھے۔

احتجاج رات تک پرامن تھا تاہم سرکاری دفاتر کے باہر موجود مظاہرین کو منتشر کرنے کی پولیس کی کوششوں کے باعث پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں ہوئیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *