ونیلا دنیا بھر میں لوگوں کا پسندیدہ فلیور ہے۔ لیکن پچھلے کچھ سال سے قدرتی ونیلا کی قیمتوں میں بے پناہ اضافہ ہو گیا ہے ۔ ایسا کیوں ہے؟

ونیلا دنیا کے بہترین فلیورز میں سے ایک ہے ۔ یہ آئیس کریم، کیک اور یہاں تک کہ پرفیوم میں بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ لیکن پچھلے چند سال سے قدرتی ونیلا کی قیمتوں میں بے تحاشا اضافہ دیکھنے کو ملا ہے۔ ایک وقت ایسا بھی تھا جب وزن میں ونیلا کی قیمت چاندی کی قیمت سے بھی اوپر تھی۔ 2014 میں قدرتی ونیلا کی قیمت 80 ڈالر فی کلو گرام تھی۔ 2017 تک یہ قیمت بڑھ کر 600 ڈالر تک پہنچ گئی۔ آج کل یہ 500 ڈالر فی کلو میں دستیاب ہے۔ تمام مارکیٹوں کی طرح ونیلا کی قیمت بھی سپلائی اور طلب پر منحصر ہوتی ہے۔ صارفین قدرتی اجزا کو مصنوعی فلیورز پر ترجیح دیتے ہیں  لیکن قدرتی ونیلا کی سپلائی بہت محدود ہے۔ ونیلا کا 80 فیصد حصہ دنیا کے ایک ہی علاقے میڈگاسکر میں اگایا جاتا ہے۔ ایک صدی سے یہ ملک ونیلا اگانے میں اکیلا راج کرتا رہا ہے۔ لیکن یہ فصل موسم  اور چوروں کے رحم و کرم پر ہوتی ہے ۔ پچھلے چند سالوں میں انڈونیشیا، یوگانڈا، اور نیدر لینڈ نے بھی قدرتی ونیلا اگانے کا عمل شروع کیا ہے۔ لیکن جب تک مزید ممالک ونیلا اگانے کا سلسلہ شروع نہیں کرتے، تب تک قیمتیں اتنی ہی زیادہ رہیں گی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *