جسٹس فائز عیسیٰ کے خلاف ریفرنس: فل کورٹ تشکیل دینے کی درخواست

سپریم کورٹ کے جج جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے اپنے خلاف صدارتی ریفرنس کی سماعت کے لیے ایک نئی درخواست سپریم کورٹ میں جمع کروائی ہے جس میں استدعا کی گئی ہے کہ ان کے خلاف ریفرنس کی سماعت کے لیے سپریم جوڈیشل کونسل کے بجائے فل کورٹ تشکیل دیا جائے۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق پیر کو دائر کی جانے والی ایک درخواست میں جسٹس فائز عیسیٰ کا کہنا ہے کہ ’سپریم جوڈیشل کونسل کی طرف سے ان کے خلاف صدر مملکت کو لکھے گئے خط کے ریفرنس کو ختم کرنے کے بارے میں کونسل کے چیئرمین اور دیگر ارکان کی طرف سے درخواست گزار (فائز عیسیٰ) کے بارے میں متعصبانہ رویہ اختیار کیا گیا تھا اس کی وجہ سے چیئرمین ان کے خلاف ریفرنس کی سماعت نہیں کرسکتے۔‘

واضح رہے کہ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں سپریم جوڈیشل کونسل نے 19 اگست کو جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف ایک ریفرنس خارج کر دیا تھا جو ان کے خلاف صدر مملکت کو خطوط لکھنے سے متعلق تھا۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف انکم ٹیکس گوشواروں میں بیرون ممالک جائیداد کو ظاہر نہ کرنے سے متعلق صدارتی ریفرنس دائر کیا گیا تھا اور اُنھوں نے اس ریفرنس کی کاپی حاصل کرنے کے لیے صدر مملکت کو خطوط لکھے تھے۔

اس سے پہلے بھی جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے اپنے خلاف دائر کیے گئے صدارتی ریفرنس کو چیلنج کر رکھا ہے۔

درخواست میں کہا گیا ہے کہ سپریم کورٹ میں یہ مثال موجود ہے کہ سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کے خلاف صدارتی ریفرنس کی سماعت سپریم جوڈیشل کونسل میں ہونے کی بجائے سپریم کورٹ کے فل بینچ نے کی تھی۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے اپنی درخواست میں کہا ہے کہ ان کی درخواست کی سماعت کرنے والے ’بینچ میں سپریم کورٹ کے تمام اہل اور قابل ججز کو شامل کیا جائے۔‘

درخواست میں کہا گیا ہے کہ درخواست گزار کی طرف سے ان کے خلاف دائر ریفرنس کے بارے میں اہم آئینی سوالات بھی اُٹھائے گئے ہیں جو عدلیہ کی آزادی، اس ریفرنس سے متعلق صدر مملکت کی آزادانہ رائے اور ریفرنس کے بارے میں وفاقی کابینہ کی منظوری سے متعلق ہیں۔

سپریم کورٹ آف پاکستان

درخواست میں اعلیٰ عدلیہ کے جج اور ان کے خاندان کے دیگر افراد کی نگرانی کے علاوہ سپریم کورٹ کے جج کے خلاف ثبوت اکھٹے کرنے کے طریقہ کار کے بارے میں بھی سوالات اُٹھائے گئے ہیں۔

جسٹس فائز عیسیٰ نے اپنی درخواست میں یہ الزام بھی عائد کیا ہے کہ ان کی اہلیہ اور بچوں کی غیر قانونی طریقے سے نگرانی کی جاتی رہی ہے جس کے لیے پاکستان کے خفیہ اداروں کو استعمال کیا گیا اور مانگے جانے پر وہ اس کے ثبوت بھی فراہم کر سکتے ہیں۔

درخواست کے مطابق سپریم جوڈیشل کونسل نے اپنے فیصلے میں کہا کہ درخواست گزار نے وزیراعظم اور ان کی بیویوں کو معاملے میں بلاوجہ گھسیٹا جبکہ حقیقت اس کے بالکل برعکس ہے۔

جسٹس عیسیٰ کا کہنا ہے 'سپریم جوڈیشل کونسل یہ بات بھول رہی ہے صدر نے میرے خلاف ریفرنس وزیراعظم کی ہدایت پر ہی دائر کیا تھا۔ دراصل وزیراعظم نے درخواست گزار کی بیوی اور بچوں کو اس معاملے میں گھسیٹا ہے۔'

جسٹس قاضی فائز عیسی نے کہا کہ ان کے خلاف ریفرنس بے بنیاد اورغیر متعلقہ تفصیلات اوردستاویزات پر بنایا گیا اور یہ کہ ریفرنس میں تصویر کا ایک رخ ظاہر کرنے کی کوشش کی گئی جبکہ حقیقت ریفرنس سے بالکل برعکس ہے۔

جسٹس فائز عیسی نے اپنی درخواست میں چیف جسٹس سے اپنی ملاقاتوں کا انکشاف بھی کیا ہے اور کہا ہے کہ ان کے خلاف پہلا ریفرنس دائر کیے جانے سے ایک ماہ قبل چیف جسٹس کھوسہ نے ان سے سپریم کورٹ کی عمارت کے عقب میں واقع واکنگ ٹریک پر واک کے دوران جو گفتگو کی اس کی حساسیت کے پیشِ نظر اگر عدالت چاہے تو وہ بند کمرے میں چیف جسٹس کی موجودگی میں بتانے کو تیار ہیں تاکہ چیف جسٹس کو اپنا موقف دینے کا موقع مل سکے۔

یاد رہے کہ سپریم جوڈیشل کونسل کے اہم رکن اور سپریم کورٹ کے سینئر جج عظمت سعید 27 اگست کو اپنے عہدے سے ریٹائر ہو رہے ہیں اور ان کی جگہ مشیر عالم سپریم جوڈیشل کونسل کا حصہ ہوں گے۔

جسٹس مشیر عالم اس دو رکنی بینچ کی سربراہی کر رہے تھے جس نے ایک مذہبی جماعت کی طرف سے فیض آباد دھرنے سے متعلق فیصلہ دیا تھا۔

جسسٹس عظمت سعید اور سپریم جوڈیشل کونسل کے ایک اور رکن اور سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس احمد علی شیخ کے خلاف درخواستیں بھی دائر کی گئی تھیں جن کی سماعت سپریم کورٹ کے سینئر جج جسٹس گلزار احمد کر رہے ہیں۔

جسٹس گلزار احمد سپریم جوڈیشل کونسل کے رکن بھی ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *