توہین رسالت کےغلط الزام پر بھی سزائے موت دی جائے، اسلامی نظریاتی کونسل

blasphemy_lawاسلامی نظریاتی کونسل نے توہین رسالت کا غلط الزام لگانے والے کےلئے بھی سزائے موت کی سفارش کردی جبکہ جنسی زیادتی کے مقدمات میں ڈی این اے کو بطور شہادت قبول کرنے کی حمایت کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔ اسلامی نظریاتی کونسل کے رکن مولانا طاہر اشرفی نے بدھ کو اسلامی نظریاتی کونسل کے اجلاس کے بعد کہا کہ ہم نے سفارش کی ہے کہ توہین رسالت کے موجودہ قانون کو چھیڑے بغیر ایک نیا قانون بنایا جائے تاکہ غلط الزام لگانے والے کو بھی سزا دی جا سکے کیونکہ توہین رسالت کا جھوٹا الزام لگانے والا دراصل توہین رسالت ہی کا مرتکب ہوتا ہے۔طاہر اشرفی نے بتایا کہ نظریاتی کونسل کے اجلاس میں یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ توہین رسالت کے قانون کے تحت بہتان تراشی کو روکنے کے لیے وزارت قانون کو نئی قانون سازی تجویز کرنے کی بھی باضابطہ سفارش کی جائے گی۔ اسلامی نظریاتی کونسل کا ادارہ ملک میں ایسے قوانین تجویز کرنے یا انہیں ختم کرنے کی سفارش کرنے کا حق رکھتا ہے جو اسلامی نظریات یا تصورات سے متصادم ہوں۔ مولانا اشرفی نے بتایا کہ کونسل کے اجلاس میں توہین رسالت کے قوانین کے مبینہ غلط استعمال کے بعض حالیہ واقعات زیر بحث آئے جس کے بعد جھوٹا الزام لگانے والے کو کڑی سزا دینے کا قانون بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *