کالا شاہ کاکو میں مارے جانے والے دہشت گردوں کا ہدف آئی بی کا ہیڈ کوارٹر تھا: وزیر داخلہ پنجاب

Shuja-Khanzadaپنجاب کے وزیر داخلہ شجاع خانزادہ نے دعویٰ کیا ہے کہ کالا شاہ کاکو میں دو روز قبل مارے جانے والے دہشت گردوں کا ہدف مال روڈ پر واقع انٹیلی جنس بیورو کا دفتر تھا۔ لاہور میں پریس کانفرنس کے دوران وزیر داخلہ پنجاب شجاع خانزادہ نے انکشاف کیا کہ شیخوپورہ میں ہلاک ہونے والے دہشت گردوں کی شناخت ہوگئی ہے۔ دہشت گردوں میں فیصل مبشر کا تعلق فیصل آباد، ثاقب حسین کا راول پنڈی، نعمان کا ٹانک سے تھا جب کہ خودکش حملہ آور کی شناخت نہیں ہوسکی۔ وزیر داخلہ نے یہ بھی بتایا کہ دہشت گردوں نے 5 ماہ تک افغانستان میں دہشت گردی کی تربیت حاصل کی تھی۔آئی بی کے دفتر کو نشانہ بنانے کے لیے منصوبہ بندی میں القاعدہ کے ارکان بھی شامل تھے۔ شجاع خانزادہ نے مزید کہا کہ دہشت گرد فیصل مبشر نے5 ہزار روپے ماہانہ پر گھر کرائے پر لیا۔ 29جون کو انٹیلی جنس اداروں نے مکان پر چھاپہ مارا، جہاں دہشت گردوں سے فائرنگ کے تبادلے میں تین دہشت گرد ہلاک ہوئے جب کہ ایک نے خود کو خودکش جیکٹ سے اڑا لیا، اس کے علاوہ 2 دہشت گردوں کو زخمی حالت میں گرفتار کیا گیا۔ دہشت گردوں کی فائرنگ سے ایک سیکیورٹی اہلکار زخمی ہوا، دہشت گردوں کے قبضے سے 4 خودکش جیکٹس،4 کلاشنکوف اور راکٹ لانچر برآمد ہوئے ہیں۔وزیر داخلہ پنجاب نے اس موقع پر یہ انکشاف بھی کیا کہ القاعدہ کی برصغیر شاخ کا سرغنہ بھارتی شہری ہے، جو افغانستان میں بیٹھ کر تنظیم چلا رہا ہے۔اس موقع پر شجاع خانزادہ نے ٓپریشن ضرب عضب حوالے سے کہا کہ اس سے بہت کامیابیاں ملی ہیں، پاکستان اورافغانستان میں دہشت گردوں کے گرد گھیرا تنگ ہوچکاہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *