گوجرانوالہ ٹرین حادثہ کی انکوائری رپورٹ جاری کر دی گئی

Pak-Army-7-Soldier-killed-in-Train-Incident-in-Gujranwalaمشترکہ انکوائری کمیٹی نے گوجرانوالہ ٹرین حادثے کی انکوائری رپورٹ جاری کردی ہے۔ اس رپورٹ میں حادثے کی وجہ تیز رفتاری کو قرار دے کر اس کی ذمہ داری ٹرین ڈرائیور اور دیگر ریلوے حکام پر عائد کی گئی ہے۔ گوجرانوالہ ٹرین حادثے میں 8 فوجیوں سمیت 19 افراد جان کی بازی ہار گئے تھے۔ ریلوے کے ترجمان آفتاب اکبر کی جانب سے آج جاری گئی اس رپورٹ کے مطابق ٹرین کی رفتار 30 کی بجائے 60 کلو میٹر تھی اور حادثہ تیز رفتاری کی وجہ سے پیش آیا۔ انکوائری رپورٹ میں اگرچہ ریلوے کے اعلیٰ حکام کے خلاف کارروائی کے حوالے سے تو کچھ نہیں کہا گیا، تاہم اس حادثے کی ذمہ داری درج ذیل حکام پر عائد کی گئی۔ براہ راست ذمہ داری ریاض احمد، ڈرائیور، فیصل آباد، محمد فیاض، اسسٹنٹ ڈرائیور، فیصل آباد، شاہد محمود، گارڈ، فیصل آبادپر عائد کی گئی ہے۔ جب کہ بلاواسطہ طور پر محمد احسان الحق، اسٹیشن سپرنٹنڈنٹ، فیصل آباد، محمد حنیف، فورمین،فیصل آباد، زاہد سعید، چیف کنٹرولر، لاہور، سید ظفر صدیق اختر، ڈے چیف کنٹرولر، لاہور، اللہ رکھا،ڈے چیف کنٹرولر، لاہور، محمد اویس اختر، سیکشن کنٹرولر، لاہورکوذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے۔ انکوائری رپورٹ پاکستان ریلوے اور آرمی کے سینیر افسران پر مشتمل کمیٹی کی جانب سے تیار کی گئی جسے 2 جولائی کو حادثے کی تحقیقات کے لیے تشکیل دیا گیا تھا۔ رپورٹ بنیادی شواہد، عینی شاہدین کے بیانات، متعلقہ ریکارڈ کی جانچ پڑتال اور جائے وقوع کے دورے کے موقع پر مشاہدات کی بناء پر ترتیب دی گئی۔ انکوائری رپورٹ میں حادثے کے پیچھے کسی بھی قسم کی دہشت گردی کے حوالے سے کچھ نہیں کہا گیا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *