سائیں کوڈے شاہ کے ساتھ مریخ کی سیراور دیگر مہمات!

(عطاء الحق قاسمی)A_U_Qasmi_converted

بہت دنوں سے سائیں کوڈے شاہ کے تکیے پر حاضری نہیںدے سکا تھا۔ چنانچہ دل کو کچھ بے کلی سی محسوس ہورہی تھی، سو گذشتہ روز میں ان کی خدمت میں حاضر ہوا، سائیں جی کا خادم خاص ’’دوری‘‘ میں ’’سردائی‘‘ گھوٹ رہا تھا، اس نے مجھے دیکھا تو اپنے پیلے دانتوں کی نمائش سے میرا استقبال کیا۔ میں نے سائیں کے گھٹنوں کو چھوا اور ان کے قدموں میں بیٹھ گیا، خادم خاص نے ’’سردائی‘‘ کا بھرا ہوا ایک پیالہ سائیں اور ایک میرے سامنے رکھ دیااور پھر ذرا فاصلے پر جا کر بیٹھ گیا، سائیں نے خادم خاص کو مخاطب کیا اور کہا ’’اوے بد بختا! مجھے اور کتنی سردائی پلائے گا، میں تو پہلے ہی کائنات کے آخرے کنارے تک پہنچا ہوا ہوں‘‘ یہ سن کر میں چونکا چنانچہ میں نے سائیں کو مخاطب کیااور پوچھا ’’سائیں جی، آپ نے بھی کائنات کا آخری سرا دریافت کرلیا، میں نے کل اخبار میں پڑھا ہے کہ اس ضمن میں برطانوی سائنس دان بھی کسی نتیجے تک پہنچ گئے ہیں۔‘‘ اس پر سائیں کوڈے شاہ کی بلغم میں کھنکھناتی ہنسی سنائی دی اور وہ بولے ’’جہاں سائنس صدیوں بعد پہنچتی ہے وہاں فقیر چشم زدن میں پہنچ جاتا ہے، میں یہاں تمہارے بیٹھے بیٹھے کسی بھی سیارے سے ہو کر آسکتا ہوں۔ ‘‘ مجھے سائیں جی کی بے شمار کرامات ان کے خادم خاص نے سنائی تھیں مگر یہ سب میرے لئے ’’شنید‘‘ کی حیثیت رکھتی تھیں، مجھے ’’دید‘‘ کی سعادت کبھی نصیب نہیں ہوئی تھی، چنانچہ جب میں نے سائیں جی کی زبان سے یہ دعویٰ سنا تو میں بہت زیادہ ایکسائیٹڈ ہوگیا اور میں نے کہا ’’سائیں جی، خدا کے لیے آپ ابھی مریخ سے ہو کر آئیں اور واپسی پر میرے لئے وہاں سے کوئی سوونئیر ضرور لائیں۔ جس طرح امریکی سائنس دان چاند سے وہاںکے کچھ پتھر اٹھا کر لائے تھے! ‘‘یہ سن کر سائیں کوڈے شاہ نے لال بھبھو کا آنکھوں سے کچھ اس طرح میری طرف دیکھا کہ مجھ پر لرزہ طاری ہوگیا، وہ اس وقت جلالی کیفیت میں تھے، انہوں نے شدید غصے کے عالم میں کہا ’’اے مورکھ تو سیدھی طرح یہ کیوں نہیں کہتا کہ تجھے میری بات پر اعتبار نہیں ہے اور تو دراصل میرے دورۂ مریخ کا ثبوت چاہتا ہے، میں ایک عرصے سے تیرے دل کی آنکھیں کھولنے کی کوشش کررہا ہوں لیکن لگتا ہے تیرا دماغ ابھی تک تجھے گہرے اندھیرے میں دھکیل رہا ہے۔ میں نے تیرے لئے مریخ سے کیا لے کر آنا ہے، تو چل میرے ساتھ، جو ہیرے موتی وہاں سے اٹھانا ہوں وہ اٹھا لانا اور اپنی دوزخ کی آگ میں مزید اضافہ کر لینا!‘‘
میں نے حیرت سے سائیں جی کی طرف دیکھا اور پوچھا ’’سائیں جی، کیا آپ واقعی مجھے مریخ کے دورے پر اپنے ساتھ لے جارہے ہیں؟‘‘ بولے ’’ہاں، مگر پہلے یہ ’’سردائی‘‘ پی لے‘‘ میں پورا پیالہ غٹاغٹ چڑھا گیا، سائیں جی نے خادم خاص کو ایک اور دیسی مشروب مجھے دینے کیلئے کہا اور میں نے وہ بھی ہونٹوں کے ساتھ لگایا اور ایک ہی سانس میں پی گیا۔ مجھے سائیں جی کی آواز کہیں دور سے آتی سنائی دی۔ ’’اب اپنی آنکھیں بند کر ہم مریخ کی طرف روانہ ہونے والے ہیں۔‘‘ میں نے آنکھیں کیا بند کرنا تھیں، وہ تو پہلے ہی بند ہو چکی تھیں، کچھ دیر بعد سائیں جی کی آواز ایک بار پھر کانوں سے ٹکرائی ’’اے مورکھ اپنی آنکھیں کھول لے‘‘ میں ایک عجیب سرور کے عالم میں تھا، میں نے آنکھیں کھولنے کی کوشش کی مگر وہ بوجھل ہورہی تھیں، اس پر خادم خاص نے آگے بڑھ کر میری آنکھوں کے پپوٹے اوپر کو اٹھائے اور پانی کا ایک چھینٹا میرے منہ پر مارا۔ تو میں نے محسوس کیا کہ میری آنکھیں پوری طرح کھل چکی ہیں۔ سائیں جی نے پوچھا ’’کیسا لگا مریخ؟‘‘ میں نے کہا ’’سبحان اللہ، اگر آپ اجازت دیں اور اپنے خادم خاص کو اس خاص سردائی سے مجھے ہمیشہ اسی طرح مستفید کرنے کی ہدایت کریں تو میں چاہوں گا کہ روزانہ آپ کے قدموں میں بیٹھ کر آپ کی معیت میں مریخ کی سیر کیلئے جایا کروں سائیں جی نے اثبات میں سر ہلایا!
میں اس وقت سائیں کوڈے شاہ کی خلوت خاص میں تھا، یہ ان کا مجھ پر خصوصی کرم تھا کہ وہ مجھے مریدوں کے ہجوم کے علاوہ اکیلے میں بھی اپنی دید کی اجازت مرحمت فرماتے تھے، اب دربار عام کا وقت تھا، چنانچہ ہر خاص و عام ان کی زیارت کیلئے چلا آرہا تھا، سائیں جی کے مریدوں میں خواتین کی تعداد بہت زیادہ تھی، چنانچہ وہ بھی جوں در جوں چلی آرہی تھیں۔ میں نے ہمیشہ یہی چاہا کہ میں سائیں جی کا دیدار، دیدار عام کے ان لمحوں میں کروں لیکن سائیں جی کا کہنا تھا کہ ان کا فیضان نظر مجھ پر خاص ہے، چنانچہ وہ اس مخلوط اجتماع کی بجائے میری تربیت خلوت میں کرنا چاہتے ہیں، تاہم میری خواہش پر وہ مجھے مجمع عام میں ہی بیٹھنے کی اجازت بھی مرحمت فرما دیتے تھے، یہاں آنے والے سب لوگ ان سے دعا کے طلب گار تھے، ایک بیروزگار نوجوان اپنی ملازمت کیلئے گڑگڑا رہا تھا، ایک عورت اپنے بیمار بچے کو دم کرانے کیلئے لائی تھی، ایک بانجھ عورت کو یقین تھا کہ سائیں جی کی دعا سے اس کی گود ہری ہو جائے گی، اس دوران باہر ایک لمبی قطار لگ چکی تھی اور یہ سب دعا کیلئے حاضر ہوئے تھے، ان میں سے تین چار لوگوں نے سائیں جی کے سامنے آتے ہی والہانہ انداز میں ان کے ہاتھ پائوں چومنا شروع کردیئے کیونکہ سائیں جی کی دعا سے ان کے دل کی مرادیں پوری ہوگئی تھیں، مجھےبہت حیرت ہوئی کہ واپس جاتے ہوئے وہ خادم خاص کو ہلکی سی آنکھ ضرور مارتے تھے، مگر بہت سے لوگوں نے گڑگڑا کر کہا کہ سائیں جی، آپ ہم یہ نظر خاص فرمائیں کیونکہ ہم ابھی تک محروم ہیں اس پر سائیں کوڈے شاہ انہیں گھور کر دیکھتے چنانچہ اس طرح کے لوگ الٹا شرمندہ ہو جاتے کیونکہ وہ جانتے تھے کہ اگر ان پر مرشد کی دعا اثر نہیں کررہی تو اس میں یقیناً ان کا اپنا کوئی قصور ہے۔
سائیں جی کے پاس بہت دنوں سے ایک لڑکی آرہی تھی۔ اس نے سر پر سرخ رنگ کی اوڑھنی اوڑی ہوئی اور اس کے ماہتاب چہرے کی کرنوں سے سارا تکیہ روشن ہو جاتا،دعا کیلئے اس لڑکی کی باری ہمیشہ سب سے آخر میں آتی، سو اس بار بھی جب اس کی باری آئی سب لوگ جا چکے تھے، تکیے پر صرف، میں، وہ لڑکی، خادم خاص اور سائیں رہ گئے تھے، مجمع چھٹے ہی خادم خاص اٹھ کر باہر چلا گیا۔ سائیں جی نے میری طرف بھی دیکھا لیکن میں بیٹھا رہا، بلکہ سائیں جی کے پائوں بھی دابنا شروع کردیئے، لڑکی نے ایک نظر مجھ پر ڈالی اور سائیں جی سے پوچھا ’’یہ کون ہے؟‘‘ انہوں نے مختصر سا جواب دیا ’’یہ ایک بے وقوف شخص ہے جو موقع محل کی نزاکت سے واقف نہیں ہے!‘‘ سائیں جی نے یہ کلمات پہلی دفعہ میرے بارے میں ارشاد فرمائے تھے، میں نے ان کلمات کو اپنے لیے بابرکت جانا کیونکہ میرا ایمان ہے کہ سائیں جی کی زبان سے جو لفظ بھی نکلیں وہ ان کے عقیدت مندوں کیلئے سرمایہ حیات ہوتے ہیں چنانچہ ان کی بات سمجھتے ہوئے میں نے ان کے ہاتھوں کو بوسہ دیا اور باہر آگیا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *