پاکستان اور افغانستان طالبان کے ٹھکانے ختم کریں: امریکی وزارت خارجہ

Headline wajامریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے پاکستان اور افغانستان پر زور دیا ہے کہ دونوں ممالک سرحد کی دونوں جانب طالبان کے ٹھکانوں کو ختم کرنے کے لیے کام کریں۔ واشنگٹن میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے ترجمان محکمہ خارجہ جان کربی نے پاکستان اور افغانستان کو مل کر پُرتشدد انتہاپسندی کو شکست دینے کے لیے کوشش کرنے کو کہا۔ امریکی ترجمان نے مزید کہا کہ دونوں ممالک کو باہمی کوششوں سے طالبان کی قوت کو کم کرنا چاہیے۔ ترجمان نے کہا کہ افغانستان میں طالبان کے حالیہ حملوں میں جاں بحق ہونے والوں کے لواحقین سے ہمدردی ہے۔ انہوں نے طالبان اور ان کا ساتھ دینے والوں سے مطالبہ کیا کہ وہ افغانستان میں تشدد روکیں۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ’’ افغان حکومت اور طالبان کے مابین مصالحتی عمل امریکی کی ترجیح ہے۔ امید ہے کہ طالبان کے بڑھتے ہوئے حملوں سے مصالحتی کوششیں متاثر نہیں ہوں گی۔طالبان کے داخلی معاملات کو سمجھنا اور ان سے مذاکرات مشکل ضرور ہیں تاہم یہ ناممکن نہیں۔امریکہ مصالحتی عمل کو آگے بڑھانا چاہتا ہے اور چند ہفتے قبل ہونے والے مذاکرات حوصلہ افزا ہیں۔‘‘ ایک اور سوال کے جواب میں ترجمان نے بتایا کہ افغان صدر کی حالیہ پریس کانفرنس کے بعد امریکی وزیر خارجہ نے ان سے فون پر بات کی ہے۔ دونوں راہ نماؤں کے درمیان پاک افغان سرحد کی دونوں جانب دہشت گردوں کے محفوظ ٹھکانوں کے بارے میں بات ہوئی۔ جان کیری نے افغان صدر پر زور دیا کہ دہشت گردوں کے محفوظ ٹھکانوں کو ختم کرنے کے لیے پاکستان اور افغانستان کو مل کر کام کرنا ہوگا اور یہ کوئی آسان ہدف نہیں ہے۔ اس سلسلے میں ہونے والی پیش رفت سے کسی کو یہ خیال نہیں کرنا چاہیے کہ دہشت گردوں کے محفوظ ٹھکانے ختم کرنے اور بات چیت جاری رکھنے کی ضرورت باقی نہیں رہی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *