ارے واہ! نقل حمل کے سستے اور دلچسپ ذرائع

آلوؤں کی بوریاں، میٹروں لمبی لکڑی یا کئی کئی کلوگرام گنّا، دنیا بھر میں لوگ کسی نہ کسی طرح سے اپنی چیزیں ایک سے دوسری جگہ لے جانے میں کامیاب ہو ہی جاتے ہیں، خواہ بائیسکل اور موٹرسائیکل کے ذریعے اور یا پھر گدھے کے ذریعے۔

a

کانگو: چوکُوڈُو

آگے پیچھے دو چھوٹے چھوٹے پہیے، ایک اسٹیئرنگ اور بڑا سا لکڑی کا تختہ چیزیں رکھنے کے لیے۔ یہ عجیب و غریب گاڑی چوکُوڈُو کہلاتی ہے اور مشرقی کانگو میں ہی بنتی اور وہیں استعمال ہوتی ہے۔ اسے دھکیلنے کا طریقہ بھی سادہ اور آسان ہے اور موٹر انجن سے چلنے والی گاڑی کا انتہائی سستا متبادل ہے۔

b

فلپائن: جیپنی

فلپائن میں نقل و حمل کے لیے جیپنی استعمال ہوتی ہے، جو بہت زیادہ دھواں پیدا کرنے کی وجہ سے زیادہ ماحول دوست تصور نہیں ہوتی اور تنقید کا ہدف بنتی ہے۔ اس طرز کی گاڑیاں بہت پرانی بھی ہیں۔ انہیں دوسری عالمی جنگ کے بعد امریکیوں کی چھوڑی ہوئی جیپوں کی مدد سے مقامی رنگ دے کر بنایا گیا تھا۔ اور تو اور وقت کے ساتھ ساتھ اس کے نئے ماڈل بھی آ چکے ہیں۔

c

ویت نام: موٹر سائیکل

بہت کم ہارس پاور کی یہ موٹر سائیکل جنوب مشرقی ایشیائی ملک ویت نام میں بہت کام کی چیز ہے۔ صرف دارالحکومت ہینوئے میں ہی، جس کی آبادی 6.5 ملین نفوس پر مشتمل ہے، ایسی چار ملین موٹر سائیکلز ہیں۔ صرف دو نشستوں والی اس موٹر سائیکل پر پورا کنبہ سما سکتا ہے۔ آج کل ویت نام جانے والے سیاح بھی شوق سے اس پر بیٹھ کر ملک کی سیر کرتے ہیں۔

d

کمبوڈیا: بانسوں کی ریل

بانسوں سے بنی یہ ریل نَوری بھی کہلاتی ہے لیکن وقت کے ساتھ ساتھ کمبوڈیا میں نقل و حمل کا یہ ذریعہ کم سے کم نظر آنے لگا ہے۔ کسی زمانے میں یہ گاڑی ایک ہنگامی حل کے طور پر تیار کی گئی تھی۔ سیاحوں میں اسے بے حد مقبولیت حاصل ہے۔ آپ صرف تقریباً پانچ مربع میٹر بڑے چوبی تختے پر زیادہ سے زیادہ پچاس کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چاول کے کھیتوں اور دیہات کے بیچوں بیچ سے گزرتے ہوئے ملک کی سیر کر سکتے ہیں۔

e

تھائی لینڈ: ٹُک ٹُک

سیاحوں میں ٹُک ٹُک بھی بہت مقبول ہے، جو تھائی لینڈ میں ہی نہیں بلکہ اور بھی بہت سے ملکوں میں عام نظر آتی ہے۔ یہ ٹریفک کے ہجوم میں بھی ہوا سے باتیں کرتی ہے اور تنگ سڑکوں اور گلیوں سے بھی آسانی سے نکل جاتی ہے۔ یہ مسافروں کو لے جانے والی عام ٹیکسی کا سستا متبادل بھی ہے۔ انہیں آٹو رکشہ بھی کہا جاتا ہے کیونکہ یہ سائیکل رکشہ ہی کی ترقی یافتہ شکل ہیں۔

f

کمبوڈیا: سائیکل رکشہ

خود سائیکل رکشہ بھی ہاتھ سے چلنے والی رکشہ کی ترقی یافتہ شکل ہیں، جو کبھی جاپان میں استعمال ہوتی تھی۔ تین پہیوں والی اس سائیکل کو بہت سے ملکوں میں ٹرانسپورٹ کے ایک تیز اور سستے ذریعے کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔ اس کے مختلف ماڈل ہیں، جن میں سے کئی ایک میں آگے نہیں بلکہ پیچھے بھی بیٹھنے یا سامان لادنے کی جگہ بنی ہوتی ہے۔

g

پاکستان، افغانستان: گدھا

افغانستان یا پھر پاکستان میں بھی سامان لانے لے جانے کے لیے صدیوں سے گدھا استعمال کیا جا رہا ہے۔ ٹرانسپورٹ کا یہ روایتی طریقہ پانچ ہزار سال سے بھی زیادہ عرصے سے زراعت کے ساتھ ساتھ انسانوں کو لانے لے جانے یا پھر مال برداری کے لیے بھی استعمال ہو رہا ہے۔ ایندھن سے چلنے والی گاڑیوں کے مقابلے میں گدھا بہت سستا پڑتا ہے۔

i

جرمنی: مال بردار بائیسکل

بہت سے یورپی باشندے پھر سے ٹرانسپورٹ کے سادہ طریقوں کی طرف رجوع کر رہے ہیں۔ اس بائیسکل کے ذریعے آپ اپنی شاپنگ کا سامان بھی گھر لے جا سکتے ہیں یا پھر ایک ساتھ ایک سے زیادہ بچوں کو بھی ایک سے دوسری جگہ لے جا سکتے ہیں۔ خاص طور پر کولون اور برلن جیسے بڑے شہروں میں اس طرح کے بائیسکل بہت مقبول ہو رہے ہیں۔ ویسے ایسی بائیسکل اتنی سستی بھی نہیں ہے، اس کی کم از کم قیمت ایک ہزار یورو بتائی جاتی ہے۔

بشکریہ:ڈی ڈبلیو

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *