مرد کیسی خواتین کو پرکشش سمجھتے ہیں؟

womenمرد حضرات دبلی اور اسمارٹ خواتین میں زیادہ دلچسپی لیتے ہیں کیونکہ ان کا خیال ہے کہ دبلی خواتین پرکشش،بارآور اور بیماریوں کے خطرات سے کافی حد تک محفوظ ہوتی ہیں۔ اس حوالے ایک تحقیق کی گئی ہے جس میں برطانیہ سمیت 9ممالک کے قریب 1300خواتین وحضرات کو شامل کی گیا ہے۔ تحقیق کے دوران دبلی خواتین کی تصاویر کی ریٹنگ کی گئی۔ 19کے لگ بھگ ’باڈی ماس اینڈیکس‘ کی حامل خواتین کو بہت پرکشش قرار دیا گیا۔
یونیورسٹی آف ابرڈین‘ بیجنگ میں واقع چائنیز اکیڈمی آف سائنسز کے انسٹی ٹیوٹ آف جینیٹکس اور ڈویلپمنٹ بیالوجی کے تعاون سے اس بات کی جانچ کی کوشش کی گئی کہ موٹاپے اور جسمانی کشش کے تصور میں کیا تعلق ہے۔ تحقیق کے ایک شریک کار پروفیسر جان سپیک مین نے کہا ہے کہ ’جب ہم کسی خاتون کو دیکھتے ہیں تو اس کے پرکشش ہونے کا فیصلہ اس کی مستقل میں تندرستی اور بارآوری کی صلاحیت دیکھ کر کرتے ہیں۔ ‘
تحقیق کاروں نے اس مسئلے کی مزید جانچ کے لئے ایک ریاضاتی ماڈل بنایا اور اس میں موٹاپے کے مختلف درجات اور مستقبل میں موت کے اندیشے وغیرہ کے درمیان تعلق کو واضح کرنے کی کوشش کی۔ اس ماڈل میں یہ بھی دیکھا گیا کہ موٹاپے اور مستقبل میں بچے پیدا کرنے کی صلاحیت کا آپس میں کیا تعلق ہے۔ ماڈل سے حاصل کیے گئے نتائج کے مطابق اکثر لوگ 24سے28.8باڈی ماس انڈیکس کی خواتین کو جسمانی طور پر پر کشش سمجھتے ہیں۔
اس تحقیق میں شامل افراد کے سامنے 21مختلف جسمانی حجم کی تصاویر رکھی گئیں اور ان سے کہا گیا کہ وہ پرکشش تصاویر کا انتخابwomen1 کریں۔ اکثر لوگوں نے ملتے جلتے جوابات دیے۔ تحقیق کے نتیجے میں سب سے دبلی یعنی 19باڈی ماس انڈیکس کی خواتین کو پرکشش ترین قرار دیا گیا۔ موٹاپے کی شکار خواتین میں بہت کم لوگوں نے دلچسپی لی۔ لوگوں سے جب پوچھا گیا کہ ان تصاویر میں دکھائی دینے والی خواتین کی عمروں کے بارے میں آپ کا کیا خیال ہے تو اکثر کا جواب یہ تھا کہ موٹی خواتین بڑی عمر کی ہیں۔
اس تحقیق سے یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ 17 سے 20باڈی انڈکس کے درمیان کی خواتین میں کشش نسبتاً زیادہ پائی جاتی ہے اور ان کی بچے پیدا کرنے کی صلاحیت بھی کافی زیادہ ہوتی ہے۔ اس جسمانی حجم کی حامل خواتین کو مستقبل میں بیماریوں کا خطرہ بھی کم سے کم ہوتا ہے۔
تحقیق کے آرگنائزر ڈاکٹر لوبکے وان ہالٹ نے کہا ہے کہ’’لوگوں کو اس بات پر حیران نہیں ہونا چاہیے کہ اکثر افراد بہت زیادہ دبلی خواتین میں کشش نہیں پاتے گو کہ میڈیاا ور فیشن انڈسٹری اس بات کی پرچار کرتی دکھائی دیتی ہے۔ اچھی بات یہ ہے کہ کہ اب ہم اس معاملے میں بہتر طریقے سے لوگوں کے رجحانات کو سمجھ رہے ہیں‘‘۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *