ملیریا کے 70 کروڑ کیسز کی روک تھام

Anopheles_stephensiایک نئی تحقیق کے مطابق افریقہ میں سنہ 2000 کے بعد سے ملیریا سے بچاؤ کے لیے کی جانے والی کوششوں کے نتیجے میں تقریباً 70 کروڑ کیسز کو روکا گیا۔ نیچر نامی جنرل میں شائع ہونے والی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ افریقہ میں ملیریا کے شکار مریضوں کی تعداد میں 50 فیصد تک کمی ہوئی۔ بتایا گیا ہے کہ مچھر دانیوں کا استعمال بہت زیادہ معاون ثابت ہوا۔

آکسفورڈ یونیورسٹی سے وابستہ سائینس دانوں کا کہنا ہے کہ گذشتہ 15 سالوں میں ذیلی سہارا کے علاقوں میں 60 کروڑ 63 لاکھ کیسز سے بچا گیا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ملیریا سے بچاؤ میں مچھر دانیوں کے استعمال سے 22 فیصد، آرٹیمسینن نامی دوا سے 68 فیصد اور کیڑے مار سپرے سے 10 فیصد تک فائدہ ہوا۔ خیال رہے کہ افریقہ میں بہتری کے تناسب میں کچھ کمی بھی آئی ہے۔ سنہ 2011 تک نو فیصد کیس کم ہوئے تھے تاہم اس کے بعد پانچ فیصد کمی ریکارڈ کی گئی۔

Phenom-Malariaمحقق ڈاکٹر سمیر بھٹ کا کہنا ہے کہ افریقہ میں مچھروں کی جانب سے کیڑے مار دوا کے اثرات زائل کرنا بھی ایک رکاوٹ ہے۔ اسی طرح جنوب مشرقی ایشیا میں آرٹیمسینن کے خلاف مزاحمت کا پتہ چلا ہے جس کی وجہ سے وہاں اس مرض کو کنٹرول کرنے میں مشکل ہوتی ہے۔

خیال رہے کہ اس وقت نامیبیا سمیت افریقہ کے آٹھ ممالک ملیریا کے خاتمے کے لیے کوشاں ہیں۔ ملک کے وزیرِ صحت ڈاکٹر رچرڈ کموی جن کے بھائی کا انتقال بھی ملیریا کی وجہ سے ہوا تھا کا کہنا ہے کہ ملیریا کے ملک بھر میں سامنے آنے والے کیسز میں غیر معمولی طور پر کمی ہوئی ہے۔ تاہم انھوں نے خبردار بھی کیا ہے کہ اس مرض کے بچاؤ کے لیے ملنے والی فنڈنگ کو کم کرنا بہت بدقسمتی کا باعث ہوگا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *