آڈٹ کرنے والوں کی حدود

Irfan Hussain اچھی خبر یہ ہے کہ سپریم کورٹ نے تمام سرکاری محکموں اور اداروں کو ہدایت کی ہے کہ و ہ اپنے معاملات آڈیٹر جنرل آف پاکستان کے سامنے رکھیں۔ بری خبر یہ ہے کہ یہ آئینی ادارہ اس کام کے لیے موزوں نہیں ہے۔ میں تیس برس تک اس ادارے میں مختلف عہدوں پر کام کرنے کے لیے بعد یہ رائے دینے پوزیشن میں ہوں۔ اس عرصے کے دوران آڈیٹر جنرل کا عہدہ تو ہر قسم کے الزامات سے پاک تھا لیکن یہ بات اُس کے ماتحت کام کرنے والوں کے لیے نہیں کہی جاسکتی،تاہم زرداری حکومت کے دوران اختربلندرانا کی تعیناتی کے بعد اس عہدے کے بے داغ ہونے کا دعویٰ دھندلا گیا۔ اختربلندراناکا تعلق ملتان سے تھا اوراُنہیں سابق وزیرِ ا عظم یوسف رضا گیلانی کا دوست بتایا جاتا تھا۔ اس سال کے شروع میں موجودہ حکومت نے اُنہیں مبینہ طور پر کی جانے والی غلط کاریوں کی پاداش میں عہدے سے ہٹادیا۔ ان کے سابق ساتھیوں نے الزام لگایا کہ اُنھوں نے محکمے کی بہت سے پرکشش آسامیوں کو فروخت کردیا، لیکن سچی بات یہ ہے کہ میں اس پر یقین نہ کرسکا کیونکہ میں نے اس عہدے پر بہت ایماندار افراد کو کام کرتے دیکھا ہے۔ اگرچہ یہ محکمہ جدید پیشہ ور خطوط پر نہ چلایا جاسکا لیکن آڈیٹر جنرل آف پاکستان کے عہدے پر فرائض سرانجام دینے والے افراد مجموعی طور پر بے داغ کردار کے مالک رہے ہیں۔ دراصل مختلف آسامیوں پر بھرتی کا طریقِ کار انتہائی فرسودہ ہے۔ وفاقی آسامیوں، جن میں دفترِ خارجہ سے لے کر پولیس کا محکمہ تک شامل ہے، پرنوجوان افسران کوتعیناتی کے لیے صرف ایک امتحان پاس کرنا پڑتا ہے۔ روایتی طور پر سنٹرل سول سروسز(سی ایس ایس) امتحان پاس کرنیو الے پولیس اور دفتر خارجہ کے علاوہ ڈی ایم جی (ڈسٹرکٹ مینجمنٹ گروپ) میں جاتے تھے، تاہم آج کل امیدواروں کا رجحان کسٹم اورانکم ٹیکس آفس کی طرف زیادہ ہے۔ اور اس کی وجوہ صاف ظاہر ہیں۔ اس طرح آڈٹ کا محکمہ امیدواروں کی ترجیح میں چھٹے نمبر پر ہے۔ اس میں عام طور پروہ افراد آتے ہیں جن کے نمبر اتنے نہیں(یا علاقائی کوٹہ بھی ایک وجہ ہوسکتا ہے) کہ وہ کسی اور من پسند سروس میں جائیں۔ ایک امتحان پاس کرکے آڈٹ کے محکمے میں آنے والے افراد غالبا اس کام کے لیے تربیت یافتہ نہیں ہوتے ہیں۔ ہو سکتا ہے کہ اُن میں سے بہت سوں کو اکاؤنٹنگ کی شدبد بھی نہ ہو۔ ٹریننگ کے پہلے سال اُنہیں یہ مضمون پڑھایا جاتا ہے۔ جب اُن کی تعیناتی کنفرم ہوجاتی ہے تو اُنہیں زیادہ سخت ٹریننگ دی جاتی ہے۔ یہاں اُنہیں کسی قسم کی سپیشلائزیشن بھی کرنی ہوتی ہے۔ تاہم اکاؤنٹنگ ، جو کہ مشکل مضمون سمجھاجاتا ہے( اور میرے لیے یہ اکتادینے والا تھا)میں مہارت کے لیے ایک سال کی ٹریننگ ناکافی ہوتی ہے۔ چنانچہ اس میں حیرت کی کوئی بات نہیں کہ جب زیادہ تر نوجوان افسران اس شعبے کی پیچیدگیوں کا بہت کم تصور رکھتے ہیں۔ اس کے علاوہ بہت سے ادھر آنے والے مایوسی کا بھی شکار رہتے ہیں کیونکہ وہ اپنے پسندیدہ شعبے میں نہیں جاسکے تھے۔ اس لیے یہ بات پورے وثوق سے کہی جاسکتی ہے کہ چندایک کو چھوڑکر، اس شعبے میں آنے والے زیادہ تر مردوخواتین بہت جوش و جذبے سے کام کرتے دکھائی نہیں دیں گے۔ وہ یہ بھی جانتے ہیں کہ ان کا سٹاف اُن کے لیے زیادہ تر کام کردے گا۔ یہاں قارئین کی دلچسپی کے لیے بتاتا چلوں کی آڈٹ ڈپارٹمنٹ میں طویل عرصہ تک ملازمت کرنے کے باوجود میں ایک پان شاپ کی بھی بیلنس شیٹ نہیں بناسکتا۔ اس شعبے میں سب سے اوپر پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا نمبر آتا ہے۔ یہ کمیٹی پارلیمنٹ کا طاقتور واچ ڈاگ ہے۔ اس میں حکومت اور اپویشن، دونوں طرف کے ارکان ہوتے ہیں۔ اس کے چیئرمین کا تعلق عام طور پر اپوزیشن سے ہوتا ہے۔ اس کی میٹنگز میں آڈیٹر جنرل پاکستان کی رپورٹس کا جائزہ لیا جاتا ہے۔ جس محکمے کا جائزہ لیا جارہا ہو، اس محکمے کے وزرا کی نمائندگی کرنے کے لیے اُن کے سیکرٹری اس کے سامنے پیش ہوتے ہیں۔ اگر کوئی سنگین بے ضابطگی دکھائی دے گو پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے ارکان سوال پوچھتے ہیں۔ جب زیادہ تنقید ہو تو پیش ہونے والا سیکرٹری کہہ اٹھتا ہے کہ جب یہ بے ضابطگی عمل میں آئی تو اُس وقت وہ اس عہدے پر موجود نہیں تھا۔ اس معاملے کی تحقیقات کرنے کے لیے ایک اور کمیٹی تشکیل دے دی جاتی ہے، اور یوں یہ معاملہ آگے بڑھ جاتا ہے۔ زیادہ تر کیسز میں وہ معاملہ کمیٹیوں کی بھول بھلیوں میں کہیں کھو جاتا ہے۔ موجودہ چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی، سید خورشید شاہ سے گزشتہ دس برسوں کے دوران بنائی جانے والی کمیٹیوں کی فہرست اور اُن کی پیش کردہ رپورٹس کے بارے میں پوچھنا دلچسپی سے خالی نہ ہو گا۔ سابق حکمرانوں کے سرکاری افسران ، جو ان کمیٹیوں میں بیٹھے تھے، نے یقیناًمعاملہ کہیں گول مول کرکے غائب کردیا ہوتا ہے۔ اس کا سراغ لگانا لمبی گھاس میں سے سبز گیندتلاش کرنے کے مترادف ہوگا۔ زیادہ تر کیسز میں آڈٹ کی کوالٹی بہت افسوس ناک ہوتی ہے ۔ سرکاری ایڈیٹروں کی پیش کردہ رپورٹ بہت ہی سطحی ہوتی ہے۔ جب میرے سامنے ایسی رپورٹس پیش کی جاتیں تو مجھ جیسے اناڑی کو بھی اس کے کھوکھے پن کا احساس ہوجاتا۔ نوآبادیاتی دور میں اس طرح کے آڈٹ کو قبول کیا جاتا تھا کیونکہ اُس وقت حکومت خود کو ترقیاتی اور کمرشل منصوبوں سے دور رکھتی تھی۔ تاہم اب نندی پور جیسے متنازع پلانٹ کا آڈٹ کرنے کے لیے فن علم بھی درکار ہے۔ ممکن ہے کہ پلانٹ کی فعالیت کے بارے میں اڈیٹر جنرل پاکستان کچھ نہ جانتے ہوں۔ حکومت کے طے شدہ قوانین کے تحت وہ اپنے لیے کنسلٹینٹ نہیں رکھ سکتے ہیں۔ آخری بات، بدعنوانی کے کیسز میں کوئی دستاویزی ریکارڈ نہیں رکھا جاتا۔ چنانچہ ان معاملات کی ایڈیٹنگ لاحاصل سعی ہوتی ہے۔ اس سے بہتر ہے کہ اہم افراد سے پوچھا جائے کہ اُن کے اثاثے کس طرح بڑھ گئے جبکہ بظاہر اُن کی اتنی آمدنی نہیں تھی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *