این اے 122 کی بکری اور شیر

M. Rafiullahپہلے کوئی تماشے کم تھے کہ اب اک نیا شگوفہ سامنے آ کھڑا ہوا ہے کہ ہم شکل شیر بکری کا چارا کھاگیا۔ آج اس معلوماتی شگوفے کی وجہ سے ہمیں پتا چلا ہے کہ بیلٹ پیپر پہ بکری اور شیر کی تصویر میں کوئی فرق نہیں ہے۔ حلقہ این اے 122 میں لوگ بکری کو شیر سمجھ کر بکری پر مہر لگاتے رہے اور الیکشن کا عملہ اور پریزائیڈنگ آفیسرز بھی بکری کو شیر سمجھ کر شیر کی گنتی کرتے رہے۔ اس غلط فہمی کے سبب ایاز صادق جیت گئے۔ حلقہ این اے 122کے آزاد امید وار خرم قریشی جن کا انتخابی نشان بکری تھا انہوں نے دوبارہ گنتی کے لئے الیکشن کمیشن کو درخواست دے دی ہے۔ اگر موصوف اپنی خرچ کی ہوئی رقم پر پر اعتماد ہیں تو ممکن ہے کہ درخواست کنندہ بھاری اکثریت سے جیت جائے اور پاکستان مسلم لیگ نون اور پاکستان تحریک انصاف اک دوجے کا صرف منہ دیکھتے رہ جائیں۔
پتا نہیں کل کلاں کوئی بلی کے نشان والا بھی الیکشن کمیشن کے در پہ دستک دے رہا ہو کہ بھائی دوبارہ گنتی.... تو پھر بلی تو شیر کی خالہ ہے، اس کا تو احتراماََ ہی جیت جانا بنتا ہے۔ اگر یہ سلسلہ چل نکلا تو پھر این اے 122 سے بہت سارے حلال و حرام جانوروں کا سر ا±ٹھانا بنتا ہے۔ خیر آپ گدھے کی فکر مت کیجئے کیونکہ وہ ہم پہلے ہی کھاچکے ہیں۔ اب اللہ خیر کرے، پتا نہیں بلے سے بھی کوئی نشان مشابہ ہے کہ نہیں۔ پہلے ہی خان صاحب کو یہ سمجھ نہیں لگ رہی کہ شیر اب کیوں بلے سے صرف 2500 کے فرق سے جیتا ہے اور 2013ءمیں 8000کا فرق کیسے بنا تھا جب کہ اس وقت بلا میرے ہاتھ میں تھا۔ تو بھائی کوئی انہیں یہ سادہ کلیہ بتلادے کہ تیرہ جمع ایک، چودہ بنتا ہے اور ایک جمع صفر ایک ہی رہتا ہے۔ 2013میں ہر کوئی الگ الگ الیکشن لڑ رہا تھا اور اس بار دونوں طرف مل جل کر لڑا جا رہا تھا۔
یہ این اے 122نہ ہوا گویا کہ کوئی قسمت کی پڑیا ٹھہری کہ کسی کی بھی نکل سکتی ہے یا کوئی کٹی پتنگ کہ اِسے کوئی بھی لوٹ سکتا ہے۔
خیر، بات بکری اور شیر کی ہو رہی تھی۔ کہیں ہم نے پڑھا اور سنا ہے کہ بہت سی جگہوں پہ بکری اور شیر ایک ہی گھاٹ پہ پانی پیا کرتے تھے۔ ممکن ہے کہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ دونوں ایک ہی خاندان میں جڑ گئے ہو یا ہم شکل ہو گئے ہوں۔ خیر جو بھی ہو، الیکشن کمیشن کو چاہیئے کہ وہ اس جنیٹک انجنیئرنگ دور میں ان نشانات کا بغور جائزہ لے اور اس قسم کے ابہام کو سِرے سے ختم کردے کہ بیچارہ ووٹر کنفیوز نہ ہو اور خرچہ کرنے والے کی بھی حوصلہ شکنی نہ ہو۔ اگر کہیں جلتی موم بتی کا نشان ہے تو اسے بھی چیک کرلیا جائے کہ کہیں وہ بجھ تو نہیں گئی اور اگر بجھی موم بتی کے ساتھ کھیرا اور کریلا پڑا ہے تو پھر بھائی کنفیوزن تو یقیناََ ہو گی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *