تحریک انصاف کی سینئر قیادت پر کرپشن اور خواتین سے نازیبا سلوک کے الزامات

ptiپاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما جہانگیر ترین اور اسدعمر پر بھی بالواسطہ طور پر کرپشن کے سوالات اٹھنے شروع ہوگئے ہیں جبکہ یہ بھی دعویٰ سامنے آیاہے کہ اسدعمر کے قریبی ساتھی عامر مغل پر دھرنے کے دوران درجنوں خواتین کو ہراساں کرنے کا الزام ہے جب کہ شعیب صدیقی پنجاب ٹینٹ ہاﺅ کے نام پر ڈی جے بٹ سمیت سب بل پاس کراتے رہے ۔
نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں ایک معروف تجزیہ کار مبشرلقمان نے بتایاکہ اسدعمراورجہانگیر ترین پر بھی کرپشن کے الزامات ہیں ، ایک لابی کے سیف اللہ نیازی نے اپنی حریف لابی پر دھرنے کے دوران کرپشن کا الزام لگایاتھا ، سیف اللہ نیازی کا دھرنے کے فنڈسے کوئی لینا دینانہیں تھا کیونکہ لیکن ان کی ذمہ داری لانگ مارچ تھا، دھرنا اسد عمر کی ذمہ داری تھی کیونکہ دھرنا اسدعمر کے انتخابی حلقے میں دیا گیا تھا۔ دھرنے کی انتظامیہ میں اسدعمر اور عامر مغل بنیادی کردار تھے اور عامر مغل پر ہی دھرنے کے دوران درجنوں اور بعض اطلاعات کے مطابق 83خواتین کو ہراساں کیے جانے کا الزام لگا۔
مبشرلقمان کے مطابق لاہور سے ضمنی انتخابات میں ایم پی اے بننے والے شعیب صدیقی تمام بل پنجاب ٹینٹ ہاﺅس کے نام پر منظورکراتے رہے ، یہ تمام پیسہ پارٹی فنڈسے لیاگیا اور اس کی اصل کہانی 2013ءکے الیکشن میں سامنے آئی ۔ ، اس وقت اسد عمر فنڈ کے انچارج تھے اور بیرون ملک مقیم پاکستانیوں نے 2013ءمیں پارٹی اکاﺅنٹس میں فنڈ بھیجنے شروع کئے۔ اس وقت پارٹی کے دو اکاﺅنٹس تھے، پی ٹی آئی فنڈز اور سونامی فنڈ۔ پی ٹی آئی فنڈ کا اکاﺅنٹ پارٹی فنڈ کے لئے استعمال ہونا تھا اور سونامی فنڈ نوجوان یوتھ الیکشن کے لئے تھا۔ اس فنڈ میں ہر نوجوان ایم پی اے کو دو لاکھ روپے اور ہر نوجوان ایم این اے کو چار لاکھ روپے الیکشن مہم کے لئے دینا تھے ۔ در حقیقت صرف 50 فیصد فنڈایشو کیا گیا اورباقی کا کچھ اتاپتہ نہیں۔ تبدیلی رضاکار پروگرام کے لئے 22 کروڑ روپیہ ایشو کیا گیا۔
تبدیلی رضاکار پروگرام مہم کو پی ٹی آئی کی معروف رہنما عندلیب عباس اور مس ہما دیکھ رہی تھیں۔ تبدیلی رضاکارپروگرام اپنی ناتجربہ کار قیادت کی وجہ سے بری طرح ناکام ہوا۔پاکستان الیکشن مہم کے آرگنائزر نے یہ ذمہ داری عندلیب عباس کو دی تھی اور یوسی سروے کے نام پر 16لاکھ روپے وصول کیے گئے حالانکہ ایک غیر جانبدار ادارہ یہی کام سات لاکھ روپے میں کرنے کو بھی تیارتھا ، آج کل ان دونوں خواتین کی پی ٹی آئی کے اندر بڑی مضبوط لابی ہے کیونکہ ڈاکٹر یاسمین راشد ان کے بہت قریب ہیں ۔ 2013ءکے الیکشن میں پارٹی فنڈ میں 2.5 بلین روپے اکٹھے کئے گئے لیکن پی ٹی آئی نے الیکشن کمشن آف پاکستان میں صرف 1.5 بلین کی رسیدیں جمع کرائیں۔
واضح رہے کہ مبشر لقمان دھرنے کے دوران کھل کر تحریک انصاف کی حمایت کرتے رہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *