رینجرز کو اختیارات دینے پر اپوزیشن کا احتجاج

Rangersسندھ میں رینجرز کو انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت مکمل اختیارات دینے کے خلاف بدھ کو ایوان بالا یعنی سینیٹ میں حزب مخالف کی جماعتوں پاکستان پیپلز پارٹی اور عوامی نینشل پارٹی نے بھرپور احتجاج کیا اور وفاق کے اس عمل کے خلاف ایوان کی کارروائی سے واک آوٹ کر گئے۔ اس احتجاج میں صوبہ سندھ سے نمائندگی رکھنے والی جماعت متحدہ قومی موومنٹ کے اراکین نے حصہ نہیں لیا۔ سینیٹ کے چیئرمین رضا ربانی کی صدارت میں ہونے والے اس اجلاس میں پاکستان پیپلز پارٹی کی طرف سے وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان کی طرف سے سندھ میں آپریشن جاری رکھنے سے متعلق مختلف آپشن دینے پر شدید ردعمل کا اظہار کیا گیا۔

frhat ullah babaer

سینیٹر فرحت اللہ بابر نے کہا کہ وفاق نے پورس کے ہاتھیوں کی طرح سندھ پر حملہ کیا ہے اور یہ حملہ راجہ پورس کے ہاتھیوں کی طرح ہی ناکام ہوگا۔ اُنھوں نے کہا کہ سندھ میں شدت پسندوں اور سماج دشمن عناصر کے خلاف جاری آپریشن میں صوبائی حکومت کو نظرانداز کیا گیا ہے۔ فرحت اللہ بابر کا کہنا تھا کہ بدعنوانی کو دہشت گردی کے ساتھ ملانا درست نہیں ہے۔ اُنھوں نے کہا کہ اُن کی جماعت نے شدت پسندی کے خلاف جنگ میں دیگر سیاسی جماعتوں کی نسبت سب سے زیادہ قربانیاں دی ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ رینجرز کو اختیارات دینے کے معاملے پر وفاق اور صوبے میں غلط فہمیاں پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

nisar AFP

سینیٹ میں پاکستان پیپلز پارٹی کے پارلیمانی رہنما سعید غنی نے تقریر کرتے ہوئے کہا کہ وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان خود کو شہنشاہ اور دیگر اداروں کو رعایا سمجھتے ہیں۔ اُنھوں نے کہا کہ سندھ میں رینجرز کے اختیارات کے معاملے پر عوام میں یہ تاثر دیا جارہا ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی شدت پسندوں کی حمایت کر رہی ہے۔ اُنھوں نے کہا کہ وفاقی حکومت صوبائی معاملے میں مداخلت کر کے آئین کی خلاف ورزی کر رہی ہے۔ سعید غنی کا کہنا تھا کہ اُن کی جماعت سندھ میں رینجرز کو اختیارات دینے کے معاملے کو عدالتوں میں لےکر جانے کی بجائے مل بیٹھ کر حل کرنا چاہتی ہے۔ عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما سینیٹر الیاس بلور کا کہنا تھا کہ اُن کی جماعت صوبائی خودمختاری کے معاملے پر پاکستان پیپپلز پارٹی کے ساتھ ہے۔ اُنھوں نے کہا کہ صوبائی معاملات میں بےجا مداخلت سے وفاق کی اکائیاں کمزور ہوں گی جس کا نقصان ملک کو ہوگا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *