اپوزیشن جماعتوں کا وزیراعظم کے نیب بارے بیان پرسخت ردعمل

Opposition

اسلام آباد -اپوزیشن جماعتوں نے وزیراعظم نواز شریف کی جانب سے قومی احتساب بیورو (نیب) پر لگائے جانے والے الزامات پر سخت ردعمل کا اظہار کیا ہے. واضح رہے کہ وزیراعظم نے نیب پر الزام لگاتے ہوئے کہا تھا کہ وہ کرپشن کے خلاف جنگ کے نام پر سیاستدانوں کو ہراساں کر رہا ہے اور اگر یہ سلسلہ جاری رہا تو حکومت نیب کے خلاف کارروائی کرے گی۔
وزیراعظم کی جانب سے نیب پر تنقید کے حوالے سے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ نیب چیئرمین کو سنگین نتائج کی دھمکیاں دے کر وزیر اعظم نے وہ تمام اخلاقی حدیں پار کرلیں، جن کا انہیں بطور ملک کے چیف ایگزیکٹیو خیال رکھنا چاہیے تھا۔ پی ٹی آئی کے ترجمان نعیم الحق کی جانب سے جاری بیان میں وزیراعظم پر جھوٹ بولنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا گیا کہ حکومت اور وزیراعظم اپنے اس رویے سے پاک چین اقتصادی راہداری کو بھی متنازع بنا رہے ہیں، حکومت پر 5 ہزار ارب روپے کا قرضہ ہے جس نے لوگوں کی زندگی اجیرن بنادی ہے۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی شازیہ مری کا کہنا تھا کہ ان کی جماعت ہمیشہ اداروں کی خود مختاری کی بات کرتی رہی ہے، اس لیے جب سپریم کورٹ نے اُس وقت کے وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے خلاف فیصلہ سنایا تو انہوں نے اُسے چیلنج نہ کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے وزارت عظمیٰ سے استعفیٰ دے دیا۔ انہوں نے کہا کہ نیب کو موجودہ حکومت کے دباؤ میں نہ آتے ہوئے بلاامتیاز کرپشن اور کرپٹ عناصر کے خلاف کارروائی کرنی چاہیے اور اسی لیے 18ویں ترمیم کے تحت نیب کو مکمل آزادی دی گئی ہے۔ شازیہ مری نے کہا کہ انہیں نہیں معلوم کہ وزیراعظم نے نیب کو کیوں تنقید کا نشانہ بنایا، لیکن بظاہر ایسا لگتا ہے کہ وفاقی حکومت انسداد کرپشن کے ادارے سے خوش نہیں ہے اور اسی لیے وزیر اعظم کی جانب سے ایسا ردعمل سامنے آیا۔
عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کا کہنا تھا کہ نیب پر وزیراعظم کی تنقید، ادارے کو اپنے 15 رہنماؤں کی گرفتاری سے روکنے کے لیے حکومت کی پیشگی حکمت عملی کا حصہ ہے۔ ذرائع سے بات کرتے ہوئے شیخ رشید نے ان لوگوں کے نام نہیں لیے، جو ان کے مطابق گرفتار ہونے والے ہیں، تاہم انہوں نے اس طرف ضرور اشارہ کردیا کہ ان کا تعلق حکمراں جماعت مسلم لیگ (ن) سے ہے :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *