اومان کا غیر ملکیوں کی تعداد میں کمی کرنے کا فیصلہ

oman-10اومان کی حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ ملک میں موجود غیر ملکیوں کی تعداد کو ملک کی کل آبادی کے 33فیصد سے زیادہ نہیں ہونے دیا جائے گا اور اس وقت موجود اس حد سے زائد افراد کو ملک بدر کر دیا جائے گا۔
اومان نے اعلان کیا ہے کہ اس کا ارادہ ہے کہ وہ اس وقت موجود غیر ملکیوں کی مجموعی تعداد میں سے 6فیصد کوملک سے نکال دے۔ اومان کی موجودہ آبادی کے 6فیصد سے مراد ہے تقریباً 2لاکھ لوگ۔
افرادی قوت کی وزارت کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق، غیر ملکی اس وقت اومان کی مجموعی آبادی کا 39فیصد ہیں یعنی تقریباً 33لاکھ غیر ملکی اس وقت یہاں رہائش پذیر ہیں۔یہ 33لاکھ لوگ ملک میں کاروبار کرنے والے نجی شعبے کے کل ملازمین کا 90فیصد ہیں۔
فی الحال افرادی قوت کے وزیر شیخ عبداللہ بن نصیر البکری نے غیر ملکیوں کی تعداد میں کمی کے سلسلے میں کوئی خاص اقدامات اٹھانے کا اعلان نہیں کیا ۔ ان کا کہنا ہے کہ جیسے ہی انتظامیہ مزدوری سے متعلق قانون کو لاگو کرے گی ، یہ آبادی خود بخود کم ہو جائے گی۔
اس وقت ملک کے نجی شعبے میں کام کرنے والے 1776583لوگوں میں سے 244698اومانی باشندے ہیں جبکہ 1551885غیرملکی ہیں۔ ان غیر ملکیوں میں سے 242904خصوصی شعبوں(صحت، تعلیم، دفاع) میں کام کر رہے ہیں۔
ادھر کویت نے بھی کہا ہے کہ وہ غیر ملکیوں کی تعداد میں دس لاکھ تک کی کمی کرنے کا ارادہ رکھتا ہے، یعنی موجودہ آبادی کے تقریباً ایک تہائی کو 2023ء تک ملک سے نکال دیا جائے گا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *