خشک دودھ کی درآمدکیوں ضروری ہے؟

تحریر و تحقیق: شہزاد حسین بھٹی

shehzad hussain bhatti

دُودھ انسانی غذا کا ایک اہم جزو ہے۔ دودھ نہ صرف ایک مکمل غذا ہے بلکہ شفاء بھی ہے۔ ہمارے پیغمبرﷺ کی پسندیدہ ترین غذاؤں میں دودھ بھی شامل ہے۔ دودھ کی افادیت سے انکار ممکن نہیں ہے، یہ انسان کی اولین غذا ہے جو پیدائش سے لے کر بڑھاپے تک ہر عمر میں صحت کے لئے ایک نہایت ہی اہم اور ضروری ہے جو کہ انسانی وجود کی تمام تر ضروریات کو پورا کرتی ہے۔ اس میں معدنیات، جیسے کیلشیم وافر مقدار میں پایا جاتا ہے جو کہ ہڈیوں اور دانتوں کی مضبوطی کے لئے نہایت اہم ہے۔ دودھ میں موجود پروٹین جسم کی حیاتیاتی ضروریات کو پورا کرتا ہے ، جبکہ ایک اندازے کے مطابق روزانہ ایک گلاس دودھ انسانی جسم کی تقریبا چوالیس فیصد 44% حیاتیاتی ضروریات کو پورا کرتا ہے۔
عالمی اعداد وشمار کے مطابق وطن عزیز دودھ پیدا کرنے والا دنیا کا تیسرا بڑا ملک ہے جو سالانہ6 3 ارب لیٹر دودھ پیدا کرتا ہے لیکن آج اصل صورت حال اس سے یکسر مختلف نظر آتی ہے۔ یوں لگتا ہے کہ عنقریب یہ اعزاز بھی بھارت ہم سے چھین لے گا۔ایک سروے کے مطابق دنیا میں بھارت دودھ کی پیداواراوراستعمال میں سب سے آگے ہے جہاں سروے کے مطابق سالانہ حساب سے تقریباً 110ملین ٹن دودھ پیدا ہوتا ہے۔ امریکہ 85 ملین ٹن کے ساتھ دوسرے نمبر پر، تیسرے نمبر پر ہمارا ملک پاکستان ، جہاں دودھ کی سالانہ پیداواراتقریباً 36 ملین ٹن ہے۔
اس وقت پاکستان ڈیری فارمنگ کی صنعت ایک ایسی خطرناک صورتِ احوال سے دوچار ہے جس پر اگر فوری توجہ نہ دی گئی تو پاکستان پانی کے دائمی بحران کے بعد دودھ کے بحران سے بھی دوچار ہوجائے گا۔ خشک دودھ کا سیلاب ملک میں مائع دودھ کی ایک ایسی خشک سالی کا منظر پیش کرنے والا ہے کہ جہاں خالص دودھ تو ناپید ہوگا ہی، لوگ گوشت کھانے کو بھی ترس جائیں گے۔ایک اخباری اطلاع کے مطابق2010 سے 2015 تک پاکستان، بھارت سے72ملین ڈالر سے زیادہ رقم کا خشک دودھ درآمد کر چکا ہے اور دوسری طرف اسی عرصے میں مویشی پالنے والے کسان اپنے دودھ دینے والے جانور سستے داموں، قصابوں کے ہاتھ فروخت کرنے پر مجبور ہوچکے ہیں اور پاکستان سے دودھ دینے والے صحت مند زندہ جانور دھڑا دھڑ افغانستان کی طرف اسمگل ہو رہے ہیں۔
کسان صدیوں سے اس کار و بار سے وابستہ ہیں لیکن ناقص معاشی اور سیاسی پالیسیوں کی وجہ سے جیسے اور بہت کچھ وطنِ عزیز میں زوال پذیر ہے، اب یہ کار و بار بھی تباہی کی زد پر آ رہا ہے۔ گلہ بانی، دودھ، دہی، مکھن، گھی وغیرہ کے کار و بار سے وابستہ کسانوں نے بھی تو اب اپنے کام کو گھاٹے کا سودا قرار دے دیا ہے۔ایک وقت تھا جب دودھیل مویشیوں کی قدر کی جاتی تھی، اب اپنے پالنے والوں کے لیے وبالِ جاں بنتے جا رہے ہیں کیوں کہ ان بھاری بھرکم جانور کے اخراجات ان کی آمدنیوں پر بھاری پڑ رہے ہیں، اس غیر متوازن صورتِ حال کے پیشِ نظر ان جانوروں کو کم قیمت پر فروخت کر کے کسان اپنے کاندھوں پر پڑے بدحالی کے بے پناہ بوجھ کو اپنے تئیں کم کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ اُدھر دودھ دینے والے جانوروں کو جس افراتفری کے عالم میں کسانوں نے فروخت کرنا شروع کر دیا ہے، اس سے ملک میں دودھ کا شدید بحران پیدا ہونے کے آثار نظر آنے لگے ہیں۔ حال ہی میں تازہ دودھ کی برائے نام خریداری کی وجہ سے دودھ کے تاجر تشویش میں مبتلا ہو چکے ہیں۔ اسی تشویش نے ان سوچنے سمجھنے کی صلاحیت کو بھی قریب قریب سلب کر لیا ہے۔ یہ لوگ پہلے ہی دودھ کی پیکنگ کے یونٹس کی اجارہ داریوں سے پریشان ہیں۔
س سے قبل پی ڈی اے نے کہا تھا کہ اس نے وفاقی وزارت نیشنل فوڈ سیکیوریٹی اینڈ ریسرچ کو خود لکھا ہے کہ وہ اپنے طور پر اْس تازہ دودھ کی وصولی کے کام میں ملوث نہیں، جو عام لوگوں کی ضرورت کو پوری کرتا ہے لیکن اب پاکستان ڈیری ایسوسی ایشن نے یہ موقف اختیار کیا ہے کہ پیکنگ والا دودھ، تازہ دودھ کا متبادل تو نہیں ہو سکتا مگر جب دست یاب تازہ دودھ ہی غیر میعاری ہو تو اْسے کون استعمال کرنے کا خطرہ مول لے گا؟ دوسری طرف ایک اور عالم ہے وہ کچھ یوں ہے کہ پاکستان ڈیری فارمنگ صنعت کے ذرائع کے مطابق گذشتہ پانچ سال کے دوران میں پاکستان نے بھارت سے21.48 ملین کلوگرام خشک دودھ درآمد کیا ہے۔ اس کی تفصیل کچھ یوں ہے۔2010 میں بھارت سے1.168ملین کلو گرام درآمد کیا گیا،2011 میں یہ مقدار گر گئی تو درآمد 0.539 ملین کلو گرام ہو گئی، 2012 میں اس در آمد میں تیزی آئی اور 2.65 ملین کلو گرام تک پہنچ گئی۔2013 میں اس میں چار گنا سے بھی زیادہ اضافہ ہوا، یعنی اس برس9.077 ملین کلو گرام دودھ درآمد کیا گیا لیکن 2014 میں تھوڑی سی کمی کے ساتھ خشک دودھ کی درآمد کی مقدار 8.043 ملین پر ٹھہری۔
اس کے علاوہ جب آپ اقوام متحدہ کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار دیکھتے ہیں تو سر شرم سے مزید جھک جاتا ہے۔ 2014 میں پاکستان نے دنیا بھر سے بھارت کے علاوہ 117 ملین ڈالر مالیت کا33.5 ملین کلو گرام خشک دودھ منگوایا،2013 میں 70.7 ملین ڈالر سے 22 ملین کلوگرام دودھ اور 2012 میں102.1ملین ڈالر مالیت کا 35 ملین کلوگرام دودھ درآمدکیا۔ شاید اسی لیے ’’مویشی پال کسان‘‘ اب بر ملا کہتے ہیں کہ یہ سب کچھ اس لیے ہو رہا ہے کہ بھارت نے اپنے کسانوں کو اتنی زیادہ سہولیات دے رکھی ہیں۔
جن کے متعلق ہم صرف سوچ سکتے ہیں جب کہ ہماری حکومت تو صرف نظرآنے والے اور تشہیری ترقیاتی منصوبوں، جیسے میٹرو بس، اورنج ٹرین جیسے نمائشی منصوبوں پر توجہ مرکوز کیے ہوئے ہے جو ان ملکوں کو زیب دیتے ہیں جو اپنے عوام کو زندگی کی بنیادی سہولتوں کی فراہمی یقینی بنا چکے ہوں۔ ہمارا ملک اس مکان کی صورت ہے جو اندر سے تباہ حال ہو لیکن باہر کی دیواروں کو رنگ روغن سے مزین کر دیا گیا ہو، بنیادی کاموں کے لیے ہماری حکومتوں کے پاس فرصت ہی نہیں۔
ماہرین معیشت کہتے ہیں کہ پاکستان میں اس شعبے کی طرف توجہ ہی نہیں دی جارہی،حال یہ کہ یہ شعبہ (لائیو سٹاک) ملک کی مجموعی پیداوار کا 22 فی صد ہے اور ملک کی مجموعی زرعی پیداوار میں اس کا حصہ 55 فی صد سے زیادہ ہے۔ اگر ہم اس شعبے کو نظر انداز کرتے ہیں تو اس کا مطلب یہ ہو گا کہ ہم ملک کی مجموعی پیداوار (جی ڈی پی)کے12فی صد حصے کو نظر انداز کر رہے ہیں۔بھارت کو دیکھتے ہیں تو اس نے اس شعبے کو فعال بنا کر اس سے بھر پور استفادہ کیا ہے اور خاص طور پر پاکستان کی طرف سے عائد کردہ کم درآمدی ڈیوٹی اور خشک دودھ سے متعلق درآمدی قوانین میں کم زوریوں کے باعث بھارت کے برآمد کنندگان نے خوب ہاتھ رنگے ہیں۔ یاد رہے کہ بھارت کو اس حوالے سے بھی یہ سہولت میسر ہے کہ وہ سارک ممالک تنظیم کے رکن کی حیثیت سے 20 فی صد سے بھی کم ڈیوٹی پاکستان کو ادا کررہا ہے۔ جب کہ اسی ڈیوٹی کی شرح بھارت نے اپنے ہاں68 فی صد رکھی ہے، جس کے باعث اس کا صنعتی شعبہ محفوظ تر ہو گیا ہے۔
ایک اطلاع کے مطابق اس وقت پاکستان میں لاکھوں ٹن بھارتی خشک دودھ پاکستان میں ذخیرہ ہو چکا ہے، جس کی وجہ سے مقامی کسان اپنے جانور قصابوں کو فروخت کرنے پر مجبورہو چکے ہیں۔ ماہرین طعنہ زن ہیں کہ یوں تو حکومت بڑھ بڑھ کر ترکی کی ترقی کی مثالیں دیتی ہے لیکن وہ اپنی اس صنعت کو بچانے کے لیے کے لیے کیا اقدامات کر رہی ہے؟ واضح رہے کہ ترکی نے اپنے ڈیری فارمنگ کے شعبے کو تحفظ دینے کے لیے درآمدی ڈیوٹی کی شرح 180 فی صد کردی تھی، جس سے ترکی کے اندر مقامی ڈیری فارمنگ نے لمبی لمبی دہائیوں کے بجائے مہینوں کے اندر اندر صنعت کا درجہ اختیار کر لیا تھا۔امپورٹر حضرات یہ بھی کہتے ہیں کہ ملک کی ڈیری فارمنگ صنعت چوں کہ مقامی ضرورتوں کو پورا نہیں کر پا رہی، اس لیے ہم زیادہ سے زیادہ خشک دودھ درآمد کرنا چاہتے ہیں اس لیے حکومت عام آدمی کے دکھ کو سمجھے اور درآمدی ڈیوٹی کم کرے کیوں کہ افغانستان کے راستے خشک دودھ کی اسمگلنگ ہورہی ہے، جس کے باعث مارکیٹ سے ڈیوٹی کی شرح کم ہوجاتی ہے اگر یہ ڈیوٹی کم ہوجاتی ہے، تو اسمگلنگ کی لعنت کا بھی قلع قمع ہو جائے گا۔ خیال رہے کہ اس موضوع پر کوئی بات نہیں کر رہا کہ افغانستان کو گوشت کی جو اسمگلنگ دھڑ دھڑ ہو رہی ہے، اس پر قابو پانے کے لیے کیا ٹھوس اقدامات کیے گئے ہیں؟

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *