چار کروڑ ملیں گے، کچھ سوچیئے خان صاحب!

khawaja mazhar nawaz

آج کے اخبار میں  ایک خبر پڑھنے کو ملی ہے کہ ماضی کے نامور کھلاڑی اور کرکٹ ورلڈ کپ کے فاتح کپتان عمران خان آج پاک بھارت ٹی ٹوئینٹی میچ پر ایک غیر ملکی ٹی وی چینل پر چالیس منٹ کے لئے تبصرہ و کمنٹری کریں گے. اس کام کا معاوضہ انہیں چار کروڑ دیا جائے گا. عمران خان کلکتہ کے اس میچ سے قبل منعقد ہونے والی تقریب میں تقریر بھی کریں گے..
میں نے سال 1994 میں عمران خان سے ایک ملاقات میں کہا تھا کہ خان صاحب اللہ نے آپ کو پیدا کیا، اور اس کے بعد آپ کو کرکٹ کے کھیل میں منفرد پہچان بخشی. رب نے ہی آپ کو عالمگیر شہرت عطا کی. ورلڈ چیمپئن بنانے کے فورا بعد، جب آپ نے سماجی خدمت کا بیڑا اٹھایا اور اس عزم کا اظہار کیا تو شوکت خانم کینسر ہسپتال کے قیام سے آپ نے پورے عالم کو حیران کر دیا.
عرض کیا تھا کہ خاکسار کو بے حد خوشی ہوگی، اگر آپ ان دونوں میدانوں کے لئے خود کو وقف کر دیں. اور سیاست کے میدان کو اپنی ترجیحات سے نکال دیں. یہ سیاست کا بھوت آپ کو کھا جائے گا. آپ خود کو ضائع کر دیں گے. اسلئے خود کو سیاست کے گند سے بچائیں. اس شعبے میں اصلاح احوال کے لئے خدا کسی اور کو بھیج دے گا.
آپ کھیل اور سماجی میدان کے شاہ سوار ہیں. ملک و قوم کی تربیت اور خدمت کا جذبہ اس طرح بھی پورا کر کے کار ہائے نمایاں سر انجام دیئے جا سکتے ہیں.اب درج بالا خبر ہی کو لیجئے. کھیل کے میدان نے عمران کو چالیس منٹ کا معاوضہ چار کروڑ دیا ہے. اب یہ رقم سماجی بھلائی کے کام میں بھی لگ سکتی ہے. اور دیگر عوامی منصوبوں پر بھی صرف ہو گی. اس کے بر عکس سیاست سے وابستگی اور فریفتگی نے عمران خان سے بہت کچھ چھین لیا ہے. ان سے ان کی ذاتی خوشیاں تک چھین لی ہے. آج وہ اتنے بڑے گھر میں تنہا زندگی گزارنے پر مجبور ہیں. دھرنے اور احتجاج کی سیاست نے ان کے امیج کو بہت خراب کیا ہے. سیاست نے ان کی مقبولیت کے گراف کو گرا دیا ہے. بہت کچھ کھونے کے بعد ابھی بھی عمران خان کے پاس وقت اور مہلت ہے کہ وہ نئے امکانات کو سمجھیں. نئے خدمت خلق کے منصوبے ڈیزائن کریں اور اپنے اہداف حاصل کریں. وہ بلا شک و شبہ بیت پر عزم انسان ہیں. انہیں بہت کامیابیاں ملی ہیں. وہ ایک بے باک اور نڈر رہنما ہیں، مگر سیاست ان سے میل نہیں کھاتی.. وہ سماجی خدمت کے میدان سے بہت کچھ کر سکتے ہیں. اس میدان میں وہ ملک کو بہترین سماجی راہنماؤں کی کھیپ مہیا کر سکتے ہیں. جس پر قوم فخر کر سکے گی.
بہت کچھ کر دکھانے والے عمران خان کو اب بھی سنجیدگی سے اس پہلو سے نئے سرے سے سوچنا ہوگا. اور اس حوالے سے انہیں اپنا نیا لائحہ عمل تیار کرنا چاہئے. یہ ان کے لئے قدرت کا ایک اشارہ ہے. اسے عمران خان کے لئے خدا کا ایک تخلیقی منصوبہ بھی کہا جا سکتا ہے.

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *