ایپل کی دولت دنیا کے بیشتر ممالک کو پیچھے چھوڑ گئی!

appleکمپنیا ں ابھی مالیاتی بحران کے دوران پیدا ہونے والی قرضوں کی گھمبیر صورت حال کو بھولی نہیں ہیں۔اس وقت، مضبوط ترین کمپنیوں کو بھی اپنے قلیل مدتی مالی اہداف کو پورا کرنا خاصا مشکل محسوس ہو رہا ہے۔
اس کی وجہ یہ ہے کہ کمپنیاں اپنے موصولات زر میں سے زیادہ ترکو اپنی بیلنس شیٹوں میں کیش کا ڈھیر لگانے کے لئے استعمال کرتی ہیں۔ امریکہ سے جاری ہونے والے ان اعداد و شما پر ایک نظر ڈالیں۔صارفین کے اعتماد پر پورا اترنے والے ایپل کاکارپوریٹ کیش، کئی ممالک کے پاس موجود کیش سے کہیں زیادہ ہے۔
درجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کمپنی یا ملک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیش یا زرمبادلہ کے محفوظ ذخائر(بلین ڈالرز میں)
1 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایپل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔ 159
2 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ملائشیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 130
3 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ترکی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 109
4 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پولینڈ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 99
5 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انڈونیشیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 93
6 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مائیکروسافٹ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 84
7 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ڈینمارک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 82
8 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسرائیل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 80
9۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عراق۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 74
10 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فلپائن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 74
11 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ برطانیہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 70
12 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ متحدہ عرب امارات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 67
13 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پیرو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 63
14 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گوگل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 59
15 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کینیڈا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 58
16 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سویڈن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 55
17 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناروے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 55
18 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ویریزن کمیونی کیشن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 54
19 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ زیچ ریپبلک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 54
20 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فائزر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 49
21 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امریکہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 48
22 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سِسکو سسٹمز۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 47
23 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہنگری۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 46
24 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رومانیہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 45
25 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آسٹریلیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 43
26 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جنوبی افریقہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 42
27 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کولمبیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 41
28 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قطر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 41
29 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چلی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 39
30 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جرمنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 39
31۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اوریکل کارپوریشن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 37
32 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لبنان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 36
33 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اٹلی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 36
34 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انگولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 32
35 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کوالکوم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 32
36 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جوہن سن اینڈ جوہن سن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 29
37 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کویت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 29
38 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسپین۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 29
39 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جنرل موٹرز۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 28
40 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فرانس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 27
41 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مرک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 27
42 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انٹیل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 26
43 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فورڈ موٹر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 25
44 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ارجنٹینا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 25
45 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امجن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 23
46 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کوکاکولا کمپنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 20
47 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یوکرین۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 19
48 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قازاقستان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 19
49 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مراکش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 18
50 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ای ایم سی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 18
یو۔ ایس ٹرسٹ بینک کے جوزف کوئلن کا کہنا ہے کہ، ’’اس بے یقینی کی دنیا کے درمیان، ایک چیز جو ہر قسم کے شک و شبہ سے بالاتر ہے وہ یہ ہے کہ زیادہ تر امریکی کمپنیاں اپنے پاس کثیر سرمایہ رکھتی ہیں۔ بلاشبہ، امریکہ کی سب سے بڑی غیر مالی کمپنیوں کے پاس کثیر دولت موجود ہے۔ 2013ء کے آخر میں، امریکی کمپنیوں کی دولت کا تخمینہ تقریباً 1.6ٹریلین ڈالر لگایا گیا تھا، جو کہ انہی کمپنیوں کی 2012ء کی مجموعی دولت سے 12فیصد زائد ہے۔جب کہ ان کمپنیوں کی موجودہ دولت، ان کی 2008ء کی مجموعی دولت سے تقریباًدوگنا ہو چکی ہے۔ یہ اضافہ اس شرح کو ظاہر کرتا ہے کہ جس کے ساتھ ان امریکی کمپنیوں نے عالمی مالیاتی بحران کے بعد کے عرسے میں اپنی کیش پوزیشن کی تعمیر نو کی ہے۔‘‘

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *