حکومت گیلانی اور تاثیر کی رہائی میں سنجیدہ نہیں، خورشید شاہ

khurshid shahپاکستان کی قومی اسمبلی میں حزبِ اختلاف کے رہنماء سید خورشید شاہ نے سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر اور سابق وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی کے بیٹوں شہباز تاثیر اور علی حیدر گیلانی کی محفوظ رہائی میں حکومتی غیر سنجیدگی پر اسے تنقید کا نشانہ بنایا۔
انہوں نےایک بیان میں کہا کہ 'شاہد اللہ شاہد نے ذاتی طور پر کہا ہے کہ حکومت نے ہم سے ان کی رہائی کا مطالبہ نہیں کیا، اور ہم اس طرح کے مذاکرات کو قبول نہیں کریں گے'۔ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن کو حکومت اور طالبان کے درمیان موجود مذاکراتی عمل پر تحفظات ہیں، لیکن حکمران جماعت معاملے کو 'گھمانے' کی کوشش کررہی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ 'پیپلز پارٹی طالبان سے مذاکرات کے حکومتی فیصلے کی حمایت کرتی ہے، لیکن حکومت اپوزیشن پر 'پینٹ' کرنے کی کوشش کررہی ہے'۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وزیراعظم نواز شریف کو چاہیے کہ وہ اس کا نوٹس لیں۔
حکومت متعدد مرتبہ یہ دعوے کرچکی ہے کہ اس نے طالبان سے شہباز تاثیر اور علی حیدر گیلانی کی بازیابی کا مطالبہ کیا ہے، جو طالبان کی قید میں ہیں۔تاہم، 23 مارچ کو حکومت اور طالبان کے درمیان ہونے والی پہلی باضابطہ ملاقات کے کچھ ہی دیر بعد میڈیا میں آنے والی خبروں میں کہا گیا تھا کہ طالبان نے دونوں مغویوں کی رہائی سے انکار کردیا ہے۔
خیال رہے سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے بیٹے علی حیدر گیلانی کو گزشتہ سال مئی میں عام انتخابات سے کچھ روز قبل ملتان میں ان کی حلقے میں ہونے والے ایک اجلاس میں حملہ کرنے کے بعد اغوا کیا گیا تھا۔جبکہ پنجاب کے مقتول گورنر سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کو 27 اپریل 2011ء کو لاہور کے علاقے گلبرگ سے اس وقت اغوا کیا گیا تھا جب وہ اپنے دفتر کے لیے جارہے تھے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *