شام: تین جون کو صدارتی انتخابات کا اعلان

Asadشام کے پارلیمانی اسپیکر نے اعلان کیا ہے کہ ملک میں صدارتی انتخابات تین جون کو ہوں گے جس میں ایک بار پھر موجودہ صدر بشار الاسد کے منتخب ہونے کا امکان ہے۔
شام کے حالات پر نظر رکھنے والے انسانی حقوق کے ادارے کے مطابق جہاں ایک جانب الیکشن کے لیے تاریخ کے اعلان کے لیے اکٹھا ہوئے وہیں پارلیمنٹ کی عمارت پر مارٹر شیل فائر کیے گئے جس سے کم از کم دو افراد ہلاک ہو گئے۔
ملک میں جاری خانہ جنگی کے سائے میں ہونے والے یہ انتخابات سابقہ ریفرنڈم سسٹم میں آئینی ترمیم کے بعد ہونے والے پہلے صدارتی انتخابات ہوں گے۔ادارے کے مطابق مارچ 2011 سے جاری خانہ جنگی میں اب تک کم از کم ڈیڑھ لاکھ افراد ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ باغیوں نے ملک کے بڑے حصے پر قبضہ بھی کر لیا ہے۔محمد ال لحم نے پارلیمنٹ کے خصوصی سیشن کے دوران کہا کہ شام کے صدارتی انتخاب کے لیے میں ملک کے شامی عوام تین جون کو صبح سات سے شام سات بجے تک اپنے حق رائے دہی کا استعمال کریں گے۔انہوں نے کہا کہ شام سے باہر رہنے والے ملک کے شہریوں کے ووٹنگ 28 مئی کو ہوگی جہاں انتخابی امیدوار منگل یکم جون تک اپنے کاگزات نامزدگی جمع کرا سکتے ہیں۔
بشار الاسد 2000 میں اپنے والد حافظ کے انتقال کے بعد صدر بنے تھے اور ان کی موجودہ مدت 17 جولائی کو ختم ہونے والی ہے تاہم تجزیہ نگاروں کے مطابق ملک میں جاری بحران کے باوجود وہ ایک بار پھر سات سالہ مدت کے لیے صدر منتخب ہو جائیں گے۔
نئے انتخابی قوانین کے تحت امیدوار کا گزشتہ سات سال کے دوران شام میں رہنا ضروری قراردیا گیا ہے جس کے باعث ملک کے باہر پناہ لینے والے اہم اپوزیشن امیدوار انتخابی دوڑ سے باہر ہو گئے ہیں۔
شام میں تنازع کا آغاز تین سال قبل پرامن احتجاج سے ہوا تھا لیکن حکومتی کریک ڈاؤن کے باعث یہ شدت اختیار کرتے ہوئے خانہ جنگی میں تبدیل ہو گئے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *