شمالی کوریاسے ایشیا اورامریکہ دونوں کوخطرہ ہے، اوبامہ

obamaامریکی صدر بارک اوبامہ نے کہا ہے کہ شمالی کوریا نہ صرف ایشیا بلکہ امریکہ کیلئے بھی خطرہ بنا ہوا ہے۔انہوں نے یہ بیان جمعے کے روز جنوبی کوریا کے دورے کے موقع پر کیا ہے اور جنوبی کوریا کے ر بارک گیون ہئی نے کسی بھی ' اشتعال انگیز' عمل کیخلاف خبردار کیا ہے۔
مارچ میں شمالی کوریا نے اعلان کیا تھا کہ اس بات کو خارج از امکان نہ سمجھا جائے کہ وہ اپنی ایٹمی صلاحیت کو مزید مضبوط بنانے کیلئے ایک ' نئی قسم ' کا ایٹمی تجربہ کرے گا۔ اس سے قبل پیونگ یانگ نے ایک درمیانے درجے کے بیلسٹک میزائل کا تجربہ بھی کیا ہے۔
دونوں صدر سیئول میں ایک کانفرنس کے بعد میڈیا سے خطاب کررہے تھے جو اوبامہ کے چار ایشیائی ممالک کے دورے کا دوسرا مرحلہ تھا۔ اوبامہ نے توقع ظاہر کی کہ چین شمالی کوریا کے حریف ہونے کی حیثیت سے اس پر اپنا اثرورسوخ ڈالے گا۔جنوبی کوریا کے صدر نے کہا کہ شمالی کوریا کے چوتھے ایٹمی تجربے کے ساتھ چھ فریقی امن مذاکرات بے معنی رہیں گے۔ واضح رہے کہ شمالی اورجنوبی کوریا، امریکہ ، روس اور چین کے درمیان اس معاملے پر مذاکرات ہوتے رہتے ہیں۔
سال 2006 میں ایٹمی تجربہ کرنے پر شمالی کوریا پر اقوامِ متحدہ نے پابندیاں عائد کردی تھیں۔ اس کے تحت ہتھیاروں اور مالیاتی پابندیاں بھی عائد کی گئی تھیں۔واشنگٹن نے کہا ہے اگر شمالی کوریا ایٹمی تجربات ترک کردے تو اس سے مذاکرات کئے جاسکتے ہیں۔اس موقع پر صدر اوبامہ نے کہا کہ پیونگیانگ کی اشتعال انگیزیاں اسے مزید تنہا کریں گی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *