امن کا پیغام لے کر بھارت جا رہا ہوں، نواز شریف

nawazوزیر اعظم نواز شریف ہندوستان کے نومنتخب وزیراعظم نریندر مودی کی تقریب حلف برداری میں شرکت کے لیے نئی دہلی پہنچ گئے۔
پیر کی صبح ساڑھے نو بجے لاہور سے روانہ ہونے والے پاکستانی وفد میں وزیراعظم کی بیوی کلثوم نواز، بیٹے حسین نواز، مشیر برائے قومی سلامتی و امورِ خارجہ سرتاج عزیز، چوہدری آصف کرمانی بھی شامل ہیں۔ روانہ ہونے سے پہلے نواز شریف نے لاہور میں صحافیوں سے گفتگو میں بتایا کہ پاکستان انڈیا کے ساتھ اچھے تعلقات چاہتا ہے اور وہ امن کا پیغام لے کر جا رہے ہیں۔
یاد رہے کہ برصغیر پاک و ہند کی تقسیم کےبعد یہ پہلا تاریخی موقع ہوگا کہ پاکستانی وزیرِاعظم اپنے ہندوستانی ہم منصب کی حلف برداری کی تقریب میں شریک ہوں گے۔ توقع ہے کہ نواز شریف کے شام چار بجے ہندوستانی میڈیا کے نمائندوں کے ساتھ ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کریں گے۔ اس کے بعد وہ شام چھ بجے ایوانِ صدر میں منعقدہ حلف برداری کی تقریب میں شرکت کریں گے۔
اس کے بعد نواز شریف صدر پرنب مکھرجی کی طرف سے دیے گئے عشائیے میں بھی شریک ہوں گے۔ کل ستائیس مئی بروز منگل کو دوپہر سو بارہ بجے ان کی وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ ایک باضابطہ ملاقات کا پروگرام طے ہے۔ اس ملاقات کے بعد نواز شریف ہندوستانی صدر پرناب مکھر جی سے بھی ملاقات کریں گے۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ ملاقات میں پاکستان کی جانب سے جامع مذاکرات کی بحالی پر زور دیا جائے گا۔ پاکستان تعلقات معمول پر لانے کے لیے اعتماد سازی کے اقدامات کی تجویز پیش کرے گا۔ پاکستان تعلقات دوبارہ اس مقام سے شروع کرنے کی تجویزدے گا جہاں ان کا سلسلہ 1999ء میں ٹوٹ گیا تھا۔
ہندوستانی وزیراعظم کی تقریب حلف برداری میں وزیراعظم پاکستان کے علاوہ سری لنکا کے صدر مہندا راج پكشے، افغانستان کے صدرحامد کرزئی، بھوٹان کے وزیراعظم شیرگ توبگائی، نیپال کے وزیراعظم سشیل كوئیرالا، مالدیپ کے صدر عبداللہ يامين عبدالقیوم، بنگلہ دیش کی اسپیکر شیریں چوہدری بھی شرکت کریں گی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *