نظم - سرد رات

"امتیاز گورکھپوری" تنہا میں اک موڑ پہ بیٹھا سوچ رہا ہوںاب تک اس کو آ جانا تھا!سردی میں یہ رات

نظم ۔۔۔ شرط

بے خوف ملا کرتے تھے پہلے تو بہت ہمباغوں میں کبھی ہاتھوں کو ہاتھوں میں سنبھالےتھیٹر میں، کبھی کافی، کبھی

error: