غزل

اپنے سینے میں ہی خنجر کو اتارا ہم نے آستینوں میں چھپا سانپ جو مارا ہم نے وہ لکیروں پہ یقیں کر کے پریشاں ہی رہا  بگڑی تقدیر کو محنت سے سنوارا ہم نے جب مرے ساتھ نہ تھا کوئی تو اُس وقت میں بھی  اپنے سائے کو تسلسل سے پکارا ہم نے سخت جانی بھی رہی در پہ رہی مشکل بھی آسمانوں کے تلے وقت گزارا ہم نے کچھ تو آوارگی باقی ہی رہی پھر بھی فہیم اس کے کہنے پہ بھلے خود کو سدھارا ہم نے

غزل

خود سے مجھ کو نہ ایسے مٹا دیجئے پیار کا کچھ تو میرے صلہ دیجئے مانتا ہوں کہ میں ان کے قابل نہیں  پھر بھی ایسے نہ مجھ کو سزا دیجئے دل سے میں نے بنایا ہے دل کا یہ گھر آیئے اور اس کو سجا دیجئے ہے رقیبوں کی محفل مگر ایک بار موڑیئے مت نظر، اک صدا دیجئیے گنگناتی تھیں شب بھر جسے چھت پہ تم وہ غزل اب ہمیں بھی سنا دیجئے ناسمجھ ہی سہی آپ کا ہے فہیم ہاتھ اب دوستی کا بڑھا دیجیے

نظم - بے بس کتابیں

الماری میں سجی کتابیں  اور دھول سے اَٹی کتابیں  آنکھ جھکائے پوچھ رہی ہیں کوئی ہمیں کیوں پڑھتا نہیں ہے کوئی ہمیں کیوں تکتا نہیں ہے کیسے سوال کتابوں کے تھے تم جس سے غمگین ہوئے ہو ویسے سوال بجا تھے ان کے کتنی چاہ سے چھپوائی تھی فکر مند کتنے رہتے تھے  لیکن سچ تو یہ ہے تم کو الماری میں سجی کتابوں سے اب کوئی چاہ نہیں ہے انٹرنیٹ نے ان سے تم کو دور کیا ہے ڈیجیٹل دور میں تم بھی ڈیجیٹل ہو بیٹھے ہو ہر اک ہاتھ میں ہے موبائل لوگوں کی ہر بات میں ہے شامل موبائل اور ایسے میں الماری میں سجی کتابیں کوئی پڑھے کیوں جب سب کچھ موبائل میں ہے غالب، میر ہوں یا اقبال ہوں

غزل

آیا نہیں ہے صبر یہ دل بیقرار ہے اس عید پر بھی تیرا فقط انتظار ہے بیٹھا ہوں آس ملنے کی لے کر پر وہ نہیں کیسے کہوں وہ شخص مرا غم گسار ہے اب صرف مانگتا ہوں دعا دید کے لئے بس اب مرا سہارا وہ پروردگار ہے اب بھی دھڑک رہا ہے یہ دل نام پر ترے اس دل پہ یعنی اب بھی ترا اختیار ہے اس بار ساتھ عید منائیں گے ہم فہیم اس بار بھی اسی پہ مجھے اعتبار ہے

error: