منقبت

نہ پیٹوں سر  نہ آنکھیں نم کروں میں ترے جانے کا کیسے غم کروں میں  شہادت کربلا کی بھا گئی ہے تو کیوں باطل پہ سر کو خم کروں میں لیا ہے درسِ صبر ابنِ علی سے  تو پھر زخموں پہ کیوں مرہم کروں میں اگر شہداء کبھی مرتے نہیں ہیں تو پھر زندوں کا کیوں ماتم کروں میں فہیم ان کے لئے روتی ہے دنیا تو کیوں آنکھیں نہ اپنی نم کروں میں