غزل

بھلا کس بات کی خاطر مجھے اب آزمائے گافریب اور جھوٹ، مکاری سے کوئی کیا ڈرائے گا وہ دعوی کرتا

غزل

میں اس سے قبل کسی بات پہ اداس نہ تھا اگرچہ خشک تھے لب پھر بھی زورِ پیاس نہ تھا ہجومِ اہلِ تفکر میں میں ہی تھا   عاقل مگر میں وہ تھا جسے ذوقِ التماس نہ تھا اٹھی ہوئی تھی وہ ننگی نگاہ مجھ  پر   ہی میں جبکہ انکی طرح ہی تھا بے لباس نہ تھا ہے یہ عقیدہ مرا، کُفر ہے یوں مایوسی جو چوٗر چوٗر ہو گِر کے، میں وہ گلاس نہ تھا تھے اہلِ بزم ہی آدابِ بزم سے غافل جو صدرِ بزم تھا مجھ سے وہ روشناس نہ تھا بجھے چراغ کی مانند بجھ گیا   دل   بھی فہیم پھر بھی کسی طور میں اداس نہ تھا

error: