ماسٹر شیف کے ہیٹ پر 100 شکنیں کیوں ہوتی ہیں؟

فرانس: کیا آپ نے کبھی غور کیا کہ شیف کی ٹوپی پر شکنیں یا تہیں کیوں ہوتی ہیں؟

دلچسپ بات یہ ہے کہ یہ شکنیں شعوری طور پر بنائی جاتی ہیں۔ شیف کی ٹوپی کو ’ٹوک‘ کہا جاتا ہے۔ سیکڑوں سال پہلے ٹوک پر سو شکنیں ڈالی جاتی تھی جو اس باورچی کے 100 مختلف طریقوں سے انڈہ بنانے کی صلاحیت کو ظاہر کرتی ہیں۔

اچھے باورچی خانوں میں شیف سفید ٹوک پہنتے ہیں۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ ٹوک یا ہیٹ کی اونچائی شیف کے تجربے کو بھی ظاہر کرتی ہیں۔ کسی بھی ادارے میں سب سے اونچی ٹوک والا شیف سب سے زیادہ سینئر تصور کیا جاتا ہے۔

146 قبل مسیح میں بازنطینی حملہ آوروں سے ڈر کر کچھ یونانی باورچی دوسری جگہ پہنچے اور انہوں نے گرجا گھروں کے عملے سے متاثر ہوکر ان کی ٹوپیاں پہننا شروع کردیں۔ پھر یہ خوف ختم ہوگیا لیکن ٹوک یا ہیٹ پہننے کا رواج شروع ہوگیا۔

1800 کی ابتدا میں سفید ہیٹ کا رواج عام ہوگیا اور سفید ٹوک صفائی کو ظاہر کررہا تھا۔ اس کی ابتدا فرانس میں ہوئی۔ ہیٹ پر بنی شکنیں کسی بھی شیف کی انڈہ یا مرغی پکانے کے طریقوں کی نشاندہی کرتی تھی اور 100 شکنوں والا ہیٹ ماسٹر شیف کو پہنایا جاتا ہے۔

اگرچہ اب ہیٹ پہننے کے طریقوں میں کچھ تبدیلی ضرور آئی ہے لیکن ہیٹ کی اونچائی اب بھی شیف کی مہارت کو ہی ظاہر کرتی ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published.

error: