نظم

یہ کیسا کلجگ ہے پیارے
یہ کیسا کلجگ ہے پیارے

رام کے نام پہ دنگا کرتے
بھکت جو خود کو کہتے پیارے
رام کو دنگا کب بھاتا تھا
سن لو میرے رام دُلارے

یہ کیسا کلجگ ہے پیارے
یہ کیسا کلجگ ہے پیارے

مانگ رہے ہیں ووٹ جو نیتا
ہاتھ کو جوڑے بیچ ہمارے
دیتے ہیں ادھیکار سبھی کو
رو رو کر قسمت کے ہارے

یہ کیسا کلجگ ہے پیارے
یہ کیسا کلجگ ہے پیارے

بہا بہا کر اپنا پسینہ
مارے بھوک کے تڑپے سارے
دھرنے پر پھر لا کے بٹھایا
سارے چوڑے سینے والے

یہ کیسا کلجگ ہے پیارے
یہ کیسا کلجگ ہے پیارے

رام رحیم کا دیش ہمارا
نہ ذاتی نہ بھید کوئی ہے
یہ ہی باپو کا سندیش ہے
سن لو، سن لو میرے پیارے

یہ کیسا کلجگ ہے پیارے
یہ کیسا کلجگ ہے پیارے

باپو کو ہنسا نے مارا
جانتی ہے یہ ساری دنیا
ناتھو رام کی اس نفرت کو
کوئی بھی لیکن نہیں مانے

یہ کیسا کلجگ ہے پیارے
یہ کیسا کلجگ ہے پیارے

بھول کر نفرت، ذات پات کو
پھر آؤ مل بیٹھیں ہم سب
نفرت جیت نہیں پائے گا
دل میں آس یہ رکھو پیارے

یہ کیسا کلجگ ہے پیارے
یہ کیسا کلجگ ہے پیارے

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published.