غزل

جب بلاتے ہو یوں بہانے سے ڈرتے کیوں ہو قریب آنے سے گزرا ہر پل مرا تھا تجھ میں ہی  یاد آیا مگر دِلانے سے جس کو ٹھکرا دیا جہاں کے لئے اب نہ آئے گا وہ بلانے سے جب انہیں ہی خیال میرا نہیں  شکوہ کیوں کر کروں زمانے سے دل کی اتنی مجھے خبر ہے فہیم لُٹ گیا تیرے مسکرانے سے

غزل

میری تنہائی ڈسے ہے مجھے ناگن کی طرح بھیڑ میں رہتا ہوں لیکن کسی الجھن کی طرح کھل کے رونے بھی نہیں دیتا زمانہ مجھ کو آنکھ نم رہتی ہے  میری مرے دامن کی طرح میری آہوں کی صدا کوئی نہیں سنتا ہے ایک سایہ ہوں جو ویران ہے چلمن کی طرح کان میں گونجے ہے شہنائی شب و روز مرے  جیسے سنسار سجا ہو کسی دلہن کی طرح  جوڑتا جاتا ہوں حیران وجود اپنا فہیم ٹکڑوں ٹکڑوں میں بٹا ہوں کسی کترن کی طرح

غزل

ٹوٹ کر خواب جب سب بکھر جائیں گے جیتے جی اس گھڑی ہم بھی مر جائیں گے نا امیدی، اداسی، اذیت، گھٹن  دیکھنا ایک دن یہ گزر جائیں گے راستوں کا بھروسہ نہیں اب کوئی منزلوں کے بنا یہ کدھر جائیں گے زخم جتنے لگائے زمانہ مجھے  وہ نظر ڈال دے زخم بھر جائیں گے سی رکھا ہے لبوں کو تو کیا شیر ہیں  تیری چیخوں سے ہم کیسے ڈر جائیں گے عشق سمجھے نہیں ہیں ابھی تک فہیم سیکھ جائیں گے تو پھول دھر جائیں گے

قطعہ

رہا ہوں اس طرح انجان اپنی زندگانی میںکہ ہو معصوم سا کردار کوئی اک کہانی میںستم اس پر ہوا جب