نظم

بھیڑ میں تنہا رہتا ہوںآگ میں جلتا رہتا ہوں آس میں ہر دم ملنے کےخواب ہی دیکھتا رہتا ہوں بھینس

نظم - سرد رات

"امتیاز گورکھپوری" تنہا میں اک موڑ پہ بیٹھا سوچ رہا ہوںاب تک اس کو آ جانا تھا!سردی میں یہ رات

غزل

کبھی کہیں پر یاد بھی اس کی تھکتی ہے لاکھ مچلتا ہے دل سانس بھی تھمتی ہے چاند نہیں نکلا تو تم بھی بوجھل ہو یعنی چاندنی سے ہی شکل نکھرتی ہے کوئی طالبِ دید نہیں ہے لیکن وہ اسی تواتر سے ہر روز سنورتی ہے دیکھ کے اکثر اس کو غیر کی بانہوں میں اسے خبر کیا مجھ پر کیسی گزرتی ہے تجھ کو عشق فہیم نہیں لیکن اب بھی ایک حسینہ ہے جو تجھ پر مرتی ہے

نظم

یہ کیسا کلجگ ہے پیارےیہ کیسا کلجگ ہے پیارے رام کے نام پہ دنگا کرتےبھکت جو خود کو کہتے پیارےرام

error: