غزل

سہمی آنکھوں میں یہ کچھ خواب جواں رہنے دو گھر کی انگنائی میں پیروں کے نشاں رہنے دو تھک کے بیٹھی ہیں جو چوکھٹ پہ تمہاری سانسیں غم کے احساس چھپاؤ نہ، عیاں رہنے دو ظلم کا دریا ابھی سر سے گزر سکتا ہے  ہاتھ میں پھر عَلمِ حق و اذاں رہنے دو آگ تو جائے گی بجھ میری چتا کی پھر بھی جل رہی آگ جو سینے میں، دھواں رہنے دو ان کے کردار سے ایسے نہ اٹھاؤ پردہ کر نہ دے ننگا فہیم ان کو نہاں رہنے دو

غزل

یہ کیسا عشق جس میں بے بسی ہے بھلا اس کے بنا بھی زندگی ہے سنے گا کون میں کس کو پکاروں  دیارِ غیر ہے اور بیکسی ہے توقع ہے وفاداری کی ہے ان سے  یقیں کامل ہے یا پھر خوش دلی ہے ہوئی موت ایسے کہ سہما ہے انساں عجب ہے بیقراری، بے حسی ہے ہے منزل دور اور راہیں اندھیری دیا جل جائے تو پھر روشنی ہے فہیم اب کیسے میں شمع جلاؤں  مخالف ہے ہوا اور تیر گی ہے