غزل

ناداں   ہے   پروانہ   دھوکہ   کھائے   گا دل کے ہاتھوں عشق میں جل جائے گا  زعم   بھی   ہوگا   فنا   دریا  ترا تو سمندر سے جہاں مل جائے گا خواب میرا خواب بن کر رہ گیا  دوست کوئ کام میرے آئے گا جانتا ہوں جب پڑھوں گا میں کتاب ہر ورق باتیں تری دہرائے گا  باہوں میں بھرتا ہوں تجھ کو اس لئے میرا دشمن اس طرح جل جائے گا میں نصاب عشق پڑھتا ہوں فہیم یہ یقیں ہے ، تجھ کو دل پا جائے گا

جواری

کافی عرصے سے یہاں کی نجی محفلوں میں اس بگڑے رئیس جواری کا بہت ذکر ہے جس نے چین کے

غزل

"پروفیسرڈاکٹر محمد کامران" روز  قرآن  پڑھا  کر  کہ یہ  دن  کٹ جائیں ذکر  اذکار  کیا   کر  کہ یہ  

غزل

جب بلاتے ہو یوں بہانے سے ڈرتے کیوں ہو قریب آنے سے گزرا ہر پل مرا تھا تجھ میں ہی  یاد آیا مگر دِلانے سے جس کو ٹھکرا دیا جہاں کے لئے اب نہ آئے گا وہ بلانے سے جب انہیں ہی خیال میرا نہیں  شکوہ کیوں کر کروں زمانے سے دل کی اتنی مجھے خبر ہے فہیم لُٹ گیا تیرے مسکرانے سے

غزل

میری تنہائی ڈسے ہے مجھے ناگن کی طرح بھیڑ میں رہتا ہوں لیکن کسی الجھن کی طرح کھل کے رونے بھی نہیں دیتا زمانہ مجھ کو آنکھ نم رہتی ہے  میری مرے دامن کی طرح میری آہوں کی صدا کوئی نہیں سنتا ہے ایک سایہ ہوں جو ویران ہے چلمن کی طرح کان میں گونجے ہے شہنائی شب و روز مرے  جیسے سنسار سجا ہو کسی دلہن کی طرح  جوڑتا جاتا ہوں حیران وجود اپنا فہیم ٹکڑوں ٹکڑوں میں بٹا ہوں کسی کترن کی طرح

error: